site
stats
پاکستان

آرٹیکل6کیس کی سماعت، پرویز مشرف کے وکیل کے دلائل

اسلام آباد: سابق صدر پرویز مشرف کے وکیل فروغ نسیم نے ایمرجنسی کے اقدام میں شریک تمام شخصیات کو شامل تفتیش کرنےکی استدعا کردی ہے۔

پرویز مشرف کیس کی سماعت جسٹس فیصل عرب کی سربراہی میں تین رکنی بینچ نےکی، سابق صدر کے وکیل فروغ نسیم نے تین نومبر کی ایمرجنسی کے اقدام میں شریک تمام افراد کو طلب کئے جانے پر دلائل دیئے۔

فروغ نسیم نے کہا ہے کہ پرویز مشرف کیلئے دوہرا معیار کیوں اپنایا جارہا ہے، شریک ملزمان بھی شامل تفتیش کئے جائیں، بارہ اکتوبرانیس سو ننانوے کے اقدام کی توثیق کرنیوالے ججز بھی جرم میں شریک ہیں اور آرٹیکل چھ کے زمر ے میں آتے ہیں، نواز شریف نے ضیاء کے مارشل لاء کی حمایت کی پھر معافی مانگ لی وہ بھی ایسا ہی جرم تھا۔

فروغ نسیم نے کہا ہے کہ سیکریٹری داخلہ نے تسلیم کیا کہ دوسرے افراد سے تحقیقات نہیں کی گئی، شوکت عزیز نے مشورہ دینے کا ٹی وی پر اعتراف کیا مگر اُن سے پو چھ گچھ نہیں ہوئی، اسی طرح قومی اسمبلی نےاقدام کی توتیق کی لیکن کسی رکن کو کچھ نہیں کہا گیا۔

فروغ نسیم نے یہ استدعا بھی کی کہ انیس سوچھیاسٹھ سے اب تک مارشل لاء کے تمام ذمے داروں کے خلاف بھی کارروائی کی جائے۔

وکیل صفائی کے دلائل سننے کے بعدعدالت نے مزید سماعت کل تک ملتوی کردی ہے۔

Print Friendly, PDF & Email
20

Comments

comments

اس ویب سائیٹ پر موجود تمام تحریری مواد کے جملہ حقوق@2018 اے آروائی نیوز کے نام محفوظ ہیں

To Top