The news is by your side.

Advertisement

اکیسویں ترمیم کیخلاف ووٹ دینے والے ملک کے حامی نہیں،فاروق ستار

کراچی : متحدہ قومی موومنٹ کے رہنماء ڈاکٹر فاروق ستار نے کہاہے کہ اکیسویں آئینی ترمیم نے قائداعظم کے پاکستان اور طالبان کے درمیان نظریاتی لکیر کھینچ دی ہے،جنھوں نے اکیسویں ترمیم کے خلاف ووٹ دیئے ہیں وہ قائداعظم کے پاکستان کے حامی نہیں۔

کراچی میں جناح سندھ میڈیکل یونیورسٹی میں سالانہ میلے میں شرکت کے بعد میڈیاسے گفتگوکرتے ہوئے ڈاکٹر فاروق ستار کاکہناتھاکہ فوجی عدالتیں دہشت گردی کے خاتمے کامستقل حل نہیں بلکہ قائداعظم کے پاکستان کاایک حصہ ہے۔

ان کاکہناتھا کہ دوسالوں کے لیئے اکیسویں ترمیم کے نتائج سامنے آجانے چاہیئں۔ انہوں نے کہاکہ دہشت گردی اور انتہاپسندی کے خاتمے کے لئے ضروری ہے کہ کمیونٹی پولیس کانظام قائم کیاجائے اور لوگوں کواونرشپ دی جائے ۔

انہوں نے کہاکہ سانحہ پشاور کے بعد طلباء وطالبات کے  والدین خوف کے باعث دیگرشہروں میں رہ رہے اور اس کشمکش میں مبتلاہیں کہ وہ اپنے بچوں کواسکول بھیجیں یانہیں۔

ڈاکتر فاروق ستار نے کہاکہ قوم کے معماروں اور اسکولوں کوتحفظ دینے کے لئے مستقل بنیادوں پراقدامات کرنے کی ضرورت ہے۔

Print Friendly, PDF & Email

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں