حلقہ این اے 124 اور این اے 139میں دھاندلی کے حوالے سے وائٹ پیپر شائع -
The news is by your side.

Advertisement

حلقہ این اے 124 اور این اے 139میں دھاندلی کے حوالے سے وائٹ پیپر شائع

اسلام آباد : پاکستان پیپلز پارٹی کے رہنماء اعتزاز احسن نے لاہور کے حلقہ این اے ایک سو چوبیس اور این اے ایک سو انتالیس میں دھاندلی کے حوالے سے وائٹ پیپر شائع کردیا ہے۔

چودھری اعتزاز احسن کا کہنا ہے کہ دو ہزار تیرہ کے انتخابات میں دھاندلی ہوئی، اس پر دما دم مست قلندر کرنے کی ضرورت نہیں، وزیرِاعظم نواز شریف اپنے پاؤں پر کلہاڑی مارنے کے ماہر ہیں۔

لاہور میں این اے 124 میں انتخابی دھاندلی سے متعلق وائٹ پیپر جاری کرتے ہوئے پیپلز پارٹی کے رہنماء چودھری اعتزاز احسن کا کہنا تھا کہ عوامی مینڈیٹ چرانے والوں کیخلاف عوامی نمائندگی ایکٹ کے تحت کارروائی ہونی چاہئے، عوامی مینڈیٹ چرانے کے مرتکب افراد پر براہ راست آرٹیکل 6 لاگو نہیں ہوتا لیکن یہ غیر قانونی کام آرٹیکل 6 کے قریب ترین ہے۔

انہوں نے کہا کہ وہ حکومت گرانا نہیں چاہتے لیکن اس کی بدعنوانیاں ظاہر کرتے رہیں گے، ان کا کہنا تھا کہ وہ اتنے سادہ نہیں، الیکشن وقت پر چاہتے ہیں، انہوں نے انتخابی دھاندلیوں پر جوڈیشل کمیشن کی تشکیل پر بھی زور دیا۔

این اے 124 میں دھاندلی سے متعلق انہوں نے کہا کہ تمام انتخابی نتائج فرضی تھے، حلقے کے 264 پولنگ اسٹیشنز کے تھیلوں کا معائنہ کیا گیا، جس میں سے 145 تھیلوں کی مہریں توڑی جا چکی تھیں، 107 کو مہریں لگائی ہی نہیں گئیں جبکہ 28 تھیلوں کا ریکارڈ ہی تلف کیا جا چکا تھا۔

اعتزاز احسن کا مزید کہنا تھا کہ باقی ماندہ تھیلوں میں سے کئی تھیلے ایسے تھے جن کے ریکارڈ کو تلف کیا گیا تھا، ساٹ انھوں نے کہا کہ این اے ایک سو چوبیس کے تمام انتخابی نتائج فرضی تھے، تمام تھیلوں میں سے شیر نہیں بلیاں نکلی تھیں۔

ان کا کہنا تھا کہ وائٹ پیپر وزیرِاعظم اور وزیرِ اطلاعات سمیت متعلقہ اداروں تک پہنچا دیا جائے گا۔

اس موقع پر پیپلز پارٹی کے رہنماء قمر زمان کائرہ کا کہنا تھا کہ وزراء پٹرول بحران پر حکومتی نااہلی تسلیم کر چکے ہیں، گڈ گورننس ظاہر ہو گئی، بحران کے ذمہ دار خود وزیرِاعظم ہیں۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں