حکومت نے عدالتوں کو مذاق سمجھ رکھا ہے، لاہور ہائیکورٹ -
The news is by your side.

Advertisement

حکومت نے عدالتوں کو مذاق سمجھ رکھا ہے، لاہور ہائیکورٹ

لاہور : سانحہ ماڈل ٹاؤن کی جوڈیشل انکوائری رپورٹ منظر عام پر لانے کے لیے دائر درخواستوں کی سماعت کرتے ہوئے لاہور ہائی کورٹ نے  قرار دیا ہے کہ رپورٹ منظر عام پر نہ لا کر کیا حکومت گناہ گاروں کو بچانا چاہتی ہے۔

جسٹس خالد محمود خان کی سربراہی میں فل بنچ نے کیس کی سماعت کی ۔ درخواست گزاروں کی جانب سے موقف اختیار کیا گیا کہ سانحہ ماڈل ٹاون کی جوڈیشل انکوائری کروانے کے بعد حکومت اس رپورٹ کو منظر عام پر نہیں لا رہی ۔

حکومت کا موقف ہے کہ رپورٹ کے منظر عام پر لانے سے امن وامان کی صورتحال خراب ہو گی عدالت نے قرار دیا کہ رپورٹ منظر عام پر نہ لا کر حکومت کیا گنہ گاروں کو بچانا چاہتی ہے ۔

حکومت پنجاب کے وکیل نے جواب داخل کروانے کے لیے مہلت کی استدعا کی جس پر عدالت نے اظہار برہمی کرتے ہوئے ریمارکس دیے کہ آٹھ ماہ سے حکومت کو نوٹس جاری کیے مگر جواب داخل نہیں ہوا حکومت نے عدالتوں کو مذاق سمجھ رکھا ہے ۔

عدالت نے حکومت کو جواب داخل کروانے کے لیے حتمی مہلت دیتے ہوئے سماعت تین مارچ تک ملتوی کر دی ۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں