حکومت کی آمدنی اور اخراجات میں توازن مزید بگڑگیا -
The news is by your side.

Advertisement

حکومت کی آمدنی اور اخراجات میں توازن مزید بگڑگیا

کراچی: حکومت کی آمدنی اور اخراجات میں توازن مزید بگڑگیا،نوے دن میں بینکوں سےمزید بارہ سو ارب روپےکا قرض لینےکا فیصلہ ہوا،حکومت پرپہلے ہی سولہ ہزار ارب روپےکےمقامی قرضوں کا بوجھ ہے۔

بجٹ خسارہ پوراکرنےکیلئےحکومت یہ قرضہ ٹی بلز اور پاکستان سرمایہ کاری بانڈزکی نیلامی سےحاصل کرےگی۔

 اسٹیٹ بینک کےمطابق حکومت نے90روز میں بینکوں سےمزید بارہ سو ارب روپے کا قرضہ لینےکافیصلہ کیاہےجس کےتحت 1050 ارب روپےکےٹی بلز بینکوں کو فروخت کئےجائیں گے،اس کےعلاوہ 150ارب روپےکے سرمایہ کاری بانڈزکی نیلامی بھی کی جائیگی۔

ماہرین کاکہنا ہےکہ ٹیکس نیٹ وسیع نہ ہونےکےباعث حکومت کی آمدنی اور اخراجات میں توازن مزیدبگڑگیاہےجوقرضوں سےٹھیک کرنےکی کوشش کی جارہی ہےجبکہ مقامی قرضوں کابوجھ پہلےہی سولہ ہزار ارب روپے سےتجاوزکرچکاہے۔

ماہرین کےمطابق حکومت براہ راست آمدن پرٹیکس کےبجائےصرف اشیا اور خدمات پرٹیکس بڑھانےکی غلط روش اختیار کئےہوئےہے۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں