site
stats
عالمی خبریں

داعش کے خاتمے کے لیے برطانیہ کو مزید سرگرم ہونا پڑے گا، ڈیوڈ کیمرون

نیو یارک: برطانوی وزیر اعظم ڈیوڈ کیمرون کا کہنا ہے کہ داعش کے خاتمے کے لیے برطانیہ کو مزید سرگرم ہونا پڑے گا۔

امریکی نشریاتی ادارے کے پروگرام میں اظہار خیال کرتے ہوئے برطانوی وزیر اعظم کا کہنا تھا کہ دنیا دہشت گردی کی جس لہر کا سامنا کر رہی ہے اسے شکست دینے کے لیے ضروری ہے کہ شام اور عراق سے داعش کا خاتمہ کیا جائے، ان کی حکومت اس بین الاقوامی اتحاد کا حصہ ہے جو دونوں ممالک میں داعش کے ٹھکانوں پر گزشتہ کئی ماہ سے فضائی حملے کر رہا ہے تاہم وہ سمجھتے ہیں کہ داعش کے خلاف برطانیہ کو مزید سرگرمی دکھانا پڑے گی۔

غیر ملکی خبر رساں ایجنسی کے مطابق دوہزار تیرہ میں برطانوی پارلیمنٹ نے قرارداد پاس کی تھی کہ برطانوی فوج شام اور عراق نہیں بھیجی جائیگی، نہ ہی طیارے فضائی حملوں میں حصہ لیں گے،لیکن فریڈم ایکٹ کے تحت لئے گئ دستاویزات سے معلوم ہوا کہ برطانوی پائلٹ اتحادی فوج کےساتھ ملکرشام اورداعش پر حملے کررہے ہیں۔

ڈیوڈ کیمرون  نے کہا کہ دہشت گردی کے خاتمے کے لیے ضروری ہے کہ ایسے شدت پسند نظریات کو بھی شکست دی جائے جس کا براہِ راست تشدد سے تعلق نہ ہو۔ انہیں امید ہے کہ ان کی حکومت برطانیہ کے نوجوانوں کو داعش اور اس کے نظریات کا شکار ہونے سے بچانے میں کامیاب رہے گی۔

برطانوی وزیراعظم ڈیوڈ کیمرون نے کہاکہ داعش دنیا کے امن کیلئے خطرہ ہے اور وہ مزید فوج بھیج کر داعش کا خاتمہ چاہتے ہیں،لیکن پارلیمنٹ کوساتھ لے کا چلنا چاہتے ہیں۔

واضح ر ہے کہ ایک محتاط اندازے کے مطابق داعش میں کئی درجن برطانوی بھی شامل ہیں جو انٹرنیٹ پر موجود شدت پسند مواد سے متاثر ہوکر داعش میں بھرتی ہوئے ہیں۔

Print Friendly, PDF & Email
20

Comments

comments

اس ویب سائیٹ پر موجود تمام تحریری مواد کے جملہ حقوق@2018 اے آروائی نیوز کے نام محفوظ ہیں

To Top