site
stats
اہم ترین

رانا ثناء اللہ اسی سال جیل میں ہوں گے، عمران خان

اسلام آباد: عمران خان نے کہا کہ رانا ثناء اللہ کو اسی سال جیل جانا ہوگا کوئی غلط فہمی میں نہ رہے کہ اپنے موقف سے پیچھے ہٹ جائیں گے۔

اسلام آباد میں دھرنا کنونشن سے خطاب کرتے ہوئے پاکستان تحریک انصاف کے چیئرمین عمران خان کا کہنا تھا کہ دھرنے کو 126 دن ہوچکے تھے سمجھ نہیں آرہا تھا کیا کروں،دھرنے میں بڑی تعداد میں لوگ شریک ہوئے سب کا مشکور ہوں۔

انہوں نے کہا کہ تاریخ میں ایسا مظاہرہ کرنے کا کوئی سوچ بھی نہیں سکتا تھا، کہا جارہا تھا اسکرپٹ کے مطابق چل رہے ہیں، پاکستان کی تاریخ میں اتنے لوگ کبھی نہیں نکلے تھے، ہم پاکستان میں جمہوریت کے لئے نکلے تھے، جمہوریت کا مطلب آزادی ہے، تبدیلی جب آتی ہے جب خواتین اور بچے جاگ جاتے ہیں۔

عمران خان نے کہا کہ دھرنے کے دوران ہمارے نوجوان شہید ہوئے جہلم میں گلوبٹوں نے حملہ کیا،حملہ کرنے والے لوگوں کو ابھی تک گرفتار نہیں کیا گیا۔

چیرمین تحریک انصاف نے کہا کہ ہم ملک میں جمہورہت کے لئے دھرنے کے لئے نکلے تھے لیکن فیصل آباد میں تحریک انصاف کے کارکنوں پر گولیاں چلائی گئیں اور یہ سب کچھ رانا ثنا اللہ کے ایما پر ہوا، رانا ثنا اللہ سن لیں کہ وہ اسی سال جیل میں جائیں گے۔

عمران خان نے کہا کہ انتخابات 2013  میں سب سے زیادہ دھاندلی ہوئی، سانحہ پشاور کے بعد احتجاج کےنے کیلئے دل نہیں مان رہا تھا۔

عمران خان کا کہنا تھا کہ حکومت نے جوڈیشل کمیشن نہ بنایا تو ہم پورا ملک بند کردینگے، انہوں نے کہا کہ دھرنا ختم ہونے کے بعد اب تحریک انصاف کی پوری توجہ خیبر پختونخواہ کی طرف ہو گی۔اب خیبر پختونخواہ میں اصلاحات کرنے جا رہے ہیں، جن میں میرٹ کو ترجیح دی جائے گی اور اور سکولوں میں ٹیچر جبکہ ہسپتالوں میں ڈاکٹر میسر ہوں گے۔

خیبر پختونخواہ میں آئندہ کے لائحہ عمل کا اعلان کرتے ہوئے عمران خان کا کہنا تھا کہ اب ہم پختونخواہ کی پولیس کو مثالی بنائیں گے جبکہ پورے صوبے میں پینے کا صاف پانی بھی میسر ہو گا۔انہوں نے مزید بتایا کہ شہروں کی صفائی کروانا ہماری پہلی ترجیح ہے جبکہ صوبے بھر مین ایک ارب درخت بھی لگائے جائیں گے۔جبکہ صوبائی حکومت کی جانب سے عمران خان نے اعلان کیا کہ وہ پنے صوبے میں بلدیاتی انتخابات کروانے کے لیے بھی تیار ہیں جس کے ذریعے اقتدار نچلی سطح کو منتقل ہو جائے گا۔

Print Friendly, PDF & Email
20

Comments

comments

اس ویب سائیٹ پر موجود تمام تحریری مواد کے جملہ حقوق@2018 اے آروائی نیوز کے نام محفوظ ہیں

To Top