site
stats
اہم ترین

سپریم کورٹ کا شاہراہ دستورکی ایک سائیڈ مکمل کھولنے کا حکم

اسلام آباد: سپریم کورٹ نے شاہراہ دستور کی ایک سائیڈ مکمل کھولنے کا حکم دے دیا، اعلیٰ عدالت نے دونوں جماعتوں اورحکومتی وکیل سے راستہ کھولنے کی رپورٹ کل طلب کرلی ہے۔

چیف جسٹس کی سربراہی میں ممکنہ ماوارئےآئین کیس کی سماعت پانچ رکنی بینچ نے کی، وکلا کو سُننے کے بعد اعلیٰ عدالت نے شاہراہ دستور کی ایک سائیڈ مکمل کھولنے کا حکم دیا اور دونوں جماعتوں کے وکلا، اٹارنی جنرل اور رجسٹرارکو شاہراہ کا جائزہ لے کر راستہ کھولنے سے متعلق رپورٹ طلب کرلی ہے۔

دوران سماعت جسٹس انورظہیر جمالی نے حکام سے استفسار کیا کہ ملک میں حکومت کی اتھارٹی یا رٹ باقی ہے؟عدالت نے پاکستان عوامی تحریک کے وکیل سے مکالمے میں کہا کیا آپ ملک میں سول وار چاہتے ہے؟ آج اگر ایک لاکھ کا مجمع حکومت گرانے آیا ہے تو اگلی حکومت گرانے کیلئے دو لا کھ کا مجمع آجائے گا، کیا ان طریقوں سے نظام مملکت چل سکتے ہے؟

جسٹس ثاقب نثار نے کہا کہ آپ احتجاج جاری رکھیں، سپریم کورٹ روکے گی اور نہ روک سکتی ہے،  سیاسی گند دھونے کیلئےسپریم کورٹ بطور لانڈری استعمال نہیں ہوسکتی۔

جسٹس ثاقب نثارکا کہنا تھا کہ خدا کیلئے آئین کی پاسداری کی جائے، یہ کہنا کہ کارکن واپسی کے لئے تیار نہیں ظاہر کرتے ہے، لیڈر کا کارکنوں پر کنٹرول نہیں۔

کیس کی سماعت ملتوی ہونے کے کچھ دیر بعد اٹارنی جنرل، رجسٹرار اور دونوں پارٹیوں کے وکلا شاہراہ دستور کھلوانے کیلئے پہنچ گئے۔

Print Friendly, PDF & Email
20

Comments

comments

اس ویب سائیٹ پر موجود تمام تحریری مواد کے جملہ حقوق@2018 اے آروائی نیوز کے نام محفوظ ہیں

To Top