سکھر: خالد محمود سومرو پر حملے کی ابتدائی رپورٹ تیار -
The news is by your side.

Advertisement

سکھر: خالد محمود سومرو پر حملے کی ابتدائی رپورٹ تیار

سکھر: ڈاکٹرخالدسومروچھبیس سال تک جمیعت علمائےاسلام کے جنرل سیکریٹری کے عہدے پر فائز رہے۔ خالد محمود سومرو پر حملے کی ابتدائی رپورٹ تیار کرلی گئی ہے۔

لاڑکانہ سے تعلق رکھنے والےجمعت علمائے اسلام کے رہنما ڈاکٹر خالد سومرو پر چار بار قاتلانہ حملے ہو ئے تاہم وہ محفوظ رہے،آخری بار کچھ عرصے قبل رتوڈیرو میں بھی قتل کرنے کی کوشش کی گئی تھی۔

ڈاکٹر خالدسومرو دوہزار چھ میں پہلی بارسینیٹر منتخب ہوئےاورمختلف کمیٹیوں میں شامل رہے۔ ڈاکٹرخالد محمود کا سندھ کی سیاست میں اہم کرداررہا ہے۔

خالدمحمود اعلی تعلیم یافتہ ڈاکٹر تھے، انھوں نے چانڈ کا میڈیکل کالج سے ایم بی بی ایس کرنے بعد ہاؤس جاب بھی کی تھی۔ اسلامی کلچر میں سندھ یویورسٹی جامشورو سے ماسٹرز اور دینی تعلیم کی ڈگریاں وفاق المدارس العربیہ سے حاصل کیں۔

ڈاکٹر خالد نےجامعۃ الاظہرمصر سےبھی کورس کئےتھے، وہ بیس سال تک لاڑکانہ کی جامع مسجد صدیق اکبر میں امام و خطیب کے ذمہ داریاں نبھاتے رہے۔ سندھ میں جے یوآئی کےجلسوں کے تمام انتظامات بھی وہی کرتے۔

خالد محمود سومرو پر حملے کی ابتدائی رپورٹ تیار کرلی گئی ہے، چار حملہ آور سفید کلر کی کرولا کار میں سوار تھے جو بلوچی زبان میں بات کر رہے تھے۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں