site
stats
اہم ترین

پنجاب میں مسلسل بارشوں سے تباہی، دریا بپھر گئے

لاہور: پنجاب میں دریا بپھر گئے، بارشوں نے تباہی مچائی تو دریاؤں نے بھی ابلنا شروع کردیا ہے، ایک جانب جہلم میں سیلابی ریلا داخل ہوگیا تو دوسری جانب چناب کے بھی چار بند ٹوٹنے سےکئی دیہات زیرِآب آگئے جبکہ بھارت نے بھی دریائے جہلم میں بغیر اطلاع پانی چھوڑ دیا ہے۔

پنجاب میں ہونیوالی حالیہ بارشوں نے تباہی مچادی ہے، شدید بارشوں کے نتیجے میں دریا بھی ابل پڑے ہیں، پنجاب میں کئی مقامات پر منہ زور لہروں نے بند توڑ دیئے ،جس کے باعث متعدد علاقے زیرِ آب آگئے ، چارلاکھ کیوسک کا ریلا پنڈ دادن خان کی طرف بڑھنے لگا ہیں، جس کے باعث شہر ڈوبنے کا خدشہ پیدا ہوگیا ہے۔

خوشاب کے مقام پر بھی دریائے جہلم میں ایک لاکھ کیو سک کی گنجائش باقی رہ گئی ہے جبکہ آج پانچ لاکھ کیو سک کا ریلہ گزرنے کا خدشہ ہے، ممکنہ خدشات کے پیش نظر دریا کنارے آباد لوگوں کو منتقل کیا جارہا ہے۔

موسلادھار بارش سے دریائے چناب بھی بپھر گیا ہے، حفاظتی بند چار مقامات سے ٹوٹ گیا، جس کے باعث متعدد دیہات زیرآب آگئے، سیالکوٹ شہر کا بڑا حصہ زیر آب آنے کا خدشہ پیدا ہوگیا ہے، پسرور میں نالہ ڈیک میں شگاف پڑنے سے پچاس سے زائد دیہات پانی میں ڈوب گئے ۔

مظفر گڑھ میں ممکنہ سیلاب کے پیش نظر ڈی سی او نے دریا چناب کی ملحقہ آبادیوں میں ریڈ الرٹ جاری کر دیا ہے، دوسری جانب دریائے ستلج بھی بپھرنے لگا، پاکپتن کے مقام پر دریائے ستلج میں سیلاب کی وراننگ جاری کرتے ہوئے دریا کنارے آباد لوگوں کو نقل مکانی کا حکم دے دیا گیا ہے۔

منڈی بہاؤالدین کے قریب نہر اپر جہلم کا بند ٹوٹنے سے کئی دیہات زیرِآب آ گئے ہیں، نہر میں منگلا سے پانی بند کردیا گیا اور منگلا ڈیم کے اسپل ویز کھول دیئے گئے، منگلا ڈیم میں پانی سطح کی بارہ سو چالیس فٹ سے تجاوز کر گئی، منگلا ڈیم سے اڑھائی لاکھ کیوسک پانی دریائے جہلم چھوڑا گیا۔ منگلا ڈیم میں پانی کی آمد پانچ لاکھ چہھتر ہزار کیوسک اور اخراج تین لاکھ چہھتر ہزار کیوسک ریکارڈ کیا گیا ہے۔

Print Friendly, PDF & Email
20

Comments

comments

اس ویب سائیٹ پر موجود تمام تحریری مواد کے جملہ حقوق@2018 اے آروائی نیوز کے نام محفوظ ہیں

To Top