site
stats
اہم ترین

سینیٹ انتخابات: موبائل فونز کیمرا اور الیکڑونک ڈیوائس ساتھ لانے پر پابندی

اسلام آباد: سینیٹ انتخابات کے دوران اراکین قومی و صوبائی اسمبلی کے موبائل فونز کیمرا اور الیکڑونک ڈیوائس ساتھ لانے پر پابندی ہوگی، انتخابات کیلئے چار ہزار بیلٹ پیپرز چھاپے جا رہے ہیں۔

الیکشن کمیشن آف پاکستان نے صوبائی اور قومی اسمبلی کے اراکین پر سینیٹ انتخابات کے دوران موبائل فون سمیت تمام ایسے آلات پر پابندی عائد کی ہے، جس سے تصویر بنائی جاسکے۔

الیکشن کمیشن کے مطابق سینیٹ انتخابات خفیہ رائے شماری کے ذریعے ہوں گے، جنرل نشستوں کے لیے سیفد رنگ کا بیلٹ پیپر استعمال ہوگا، خواتین کی نشستوں کے لیےگلابی اور ٹیکنوکریٹس کے لیے سبز رنگ کا بیلٹ پیپر استعمال ہوگا، بیلٹ پیپرز میں امیدواروں کےنام درج ہونگے۔

ووٹرز تینوں بیلٹ پیپرز حاصل کرکے پردہ دار جگہ میں جائیگا، جس کے بعد کسی دوسرے ووٹر یا امیدوار سے بات کرنے کی اجازت نہیں ہوگی، کمرے میں پہنچ کر بال پین سے بیلٹ پیپرز پر اپنے پسندیدہ امیدوار کے نام کے سامنے ترجیحات صرف انگریزی یا ہندسوں میں درج کرنی ہوگی۔

الیکشن کمیشن نے انتخابات کے لیے ریٹرننگ افسران کو ہدایت کی ہے کہ وہ اس بات کو یقینی بنائیں کہ رائے دہندگان کی طرف سے بیلٹ کو خفیہ رکھنے کی خلاف ورزی نہ کی جائے۔

واضح رہے کہ سینیٹ کی باون نشستیں گیارہ مارچ کو خالی ہو رہی ہیں، صدرِ مملکت ممنون حسین نے سینیٹ کا اجلاس بارہ مارچ کو طلب کر لیا ہے، جس میں نو منتخب ارکان حلف لیں گے۔

چیئرمین اور ڈپٹی چیئرمین کا انتخاب بھی عمل میں لایا جائے گا، سینیٹ انتخابات کے لئے بیلٹ پیپرز کی چھپائی کا عمل بھی جاری ہے اور تقریبا چار ہزار بیلٹ پیپرز چھاپے جا رہے ہیں جبکہ ووٹرز کیلئے ایک ایک پولنگ بوتھ لگایا جائیگا۔

صوبوں میں ریٹرننگ افسران کے فرائض صوبائی الیکشن کمشنر انجام دینگے، پولنگ صبح9 سے شام4 بجے تک ہوگی۔

Print Friendly, PDF & Email
20

Comments

comments

اس ویب سائیٹ پر موجود تمام تحریری مواد کے جملہ حقوق@2018 اے آروائی نیوز کے نام محفوظ ہیں

To Top