The news is by your side.

Advertisement

شکار پور: امام بارگاہ میں دھماکہ،بچوں سمیت 55افراد جاں بحق

شکار پور: امام بارگاہ کربلا مولا میں دھماکہ ہوا، جس کے نتیجے میں بچوں سمیت پچپن یس افراد جاں بحق جبکہ پچاس سے زائد افراد زخمی ہوگئے ہیں۔

دھماکہ لکھی در کے علاقے میں واقع  امام بارگاہ میں اس وقت ہوا جب نمازِ جمعہ ادا کی جارہی تھی ،امام بارگاہ میں نمازیوں کی کثیر تعداد موجود تھی، دھماکہ کے بعد افراتفری پھیل گئی، پولیس اور امدادی ٹیمیں جائے وقوعہ پر پہنچ گئی ہیں، زخمیوں کو ایم ایس سول اسپتال منتقل کیا جارہا ہے،جہاں انہیں طبی امداد دی جا رہی ہے،  دھماکہ کی نوعیت کا اندازہ لگایا جارہا ہے، تنگ گلیوں کے باعث امدادی ٹیموں کو مشکلات کا سامنا ہے۔

وزیرِ صحت نے شکارپور کے اسپتالوں میں ایمرجنسی نافذ کردی ہے جبکہ تمام اسٹاف کو ہنگامی طور پر ہسپتالوں میں طلب کر لیا گیا ہے، اسپتال ذرائع کا کہنا ہے کہ متعدد زخمیوں کی حالت تشویشناک ہے، جس کے باعث ہلاکتوں میں اضافے کا خدشہ ہے۔

دھماکہ اتنا شدید تھا کہ آواز دور دور تک سنی گئی، دھماکے کے بعد علاقے میں خوف ہراس پھیل گیا ہے، پولیس کے مطابق دھماکہ خود کش لگتا ہے تاہم ابھی تک اس کی تصدیق نہیں ہوسکی۔

مجلس وحدت المسلمین نے تین روزہ سوگ کا اعلان کردیا ہے۔

صدر اور وزیرِ اعظم نواز شریف نے امام بارگاہ میں ہونے والے دھماکے کی شدید الفاظ میں مذمت کرتے یوئے رپورٹ طلب کر لی ہے جبکہ جاں بحق اور زخمی ہونے والوں کے اہل خانہ سے اظہار تعزیت کیا ۔

گورنر سندھ نے شکار پور دھماکے کی مذمت کرتے ہوئے آئی جی سے رپورٹ طلب کرلی ہے۔

ایس ایس پی ثاقب اسماعیل کا کہنا تھا کہ شکارپور میں ہونے والا دھماکہ خودکش تھا یا پلانٹڈ تحقیقات کی جارہی ہیں۔

Print Friendly, PDF & Email

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں