فریقین بیان بازی بند کریں، اپوزیشن جرگےکامطالبہ -
The news is by your side.

Advertisement

فریقین بیان بازی بند کریں، اپوزیشن جرگےکامطالبہ

اسلام آباد: سابق وزیر ِ داخلہ رحمان ملک کا کہنا ہے کہ وزراء کے بیانات سےمشکلات میں اضافہ ہورہا ہے، فریقین کے بیانات بند نہ ہوئے توجرگہ اپنا کام روک دے گا۔

اپوزیشن جماعتوں کے جرگے نے پاکستان عوامی تحریک کی مذاکراتی کمیٹی سے ملاقات کی، ملاقات کے بعد پاکستان عوامی تحریک کے رہنما رحیق عباسی کا میڈیا سے گفتگو کے دوران کہنا تھا کہ پارلیمنٹ میں ہمارے خلاف غیرپارلیمانی الفاظ استعمال کئےگئے جس کا احتجاج ریکارڈ کروایا ہے۔

امیر جماعت اسلامی سراج الحق کا کہنا تھا کہ مذاکرات کی گاڑی آہستہ آہستہ آگے بڑھ رہی ہے، حتمی وقت نہیں دے سکتے، دوسری جانب رحمان ملک نے حکومت سے اپیل کی کہ فوری طورپی ٹی آئی اور عوامی تحریک کے کارکنا ن کی گرفتاریاں بند کرے۔

انہوں نے اپوزیشن کے مذاکراتی جرگے میں موجودہ سیاسی بحران کو پاکستان کے لئے خطرناک قرار دیا ہے جبکہ حکومت اور دھرنے کے رہنماوں کو جلد کسی متفقہ فیصلے پر پہنچنے کا مشورہ دیا ہے، اپوزیشن کے مذاکراتی جرگے نے قومی اسمبلی میں قائد حزب اختلاف سید خورشید شاہ سے ملاقات کی۔ جس میں مولانا فضل الرحمان ،سراج الحق ،لیاقت بلوچ ،حاصل بزنجو ،جی جی جمال اور اعجازالحق شریک تھے۔

جرگے نے خورشید شاہ کو اب تک ہونے والی پیشرفت سے آگاہ کیا، میڈیا سے بات چیت کرتے ہوئے جرگے کے سربراہ سراج الحق نے کہا کہ ڈیڈ لاک کا خاتمہ ہوا ہے مگر ابھی بہت اسپیڈ بریکر موجود ہیں ، ہم نے فریقین سے لچک کا مظاہرہ کرنے کے لئے کہا ہے۔

اُن کا کہنا تھا کہ سیاسی بحران اگر ذیادہ دیر تک رہا تو پاکستان کو کافی نقصان ہوگا، اگر ہم کوئی معاہدہ کرنے میں کامیاب ہوجاتے ہیں تو پارلیمنٹ میں موجود تمام سیاسی جماعتیں اس معاہدے پر عمل درآمد کی ضامن ہوں گی۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں