The news is by your side.

Advertisement

فلم تین بہادر پوری فیملی کے لئے ہے، شرمین عبید

کراچی: تین بہادر فلم کی ہدایتکارہ شرمین عبید نے کہا ہے کہ فلم میں بچوں کے ذریعے بہادری اور ملک وقوم کیلئے کچھ کرگزرنے کا پیغام دیا گیا ہے۔

پاکستان کی پہلی اینی میٹڈ فلم تین بہادر کا پوری قوم کو بے چینی سے انتظار ہے، پروگرام ایلیونتھ آر میں اینکر پرسن وسیم بادامی سے خصوصی گفتگو کرتے ہوئے تین بہادر فلم کی ہدایتکارہ شرمین عبید کا کہنا تھا کہ آج تک پاکستان میں کسی نے بچوں کی مارکیٹ کا استعمال نہیں کیا،تین بہادر فلم پاکستان کے بارے میں ہے۔

شرمین عبید نے بتایا کہ میرے بچوں سے کوئی پوچھے کا تو بتائیں گے کہ ان کا سپر ہیرو کون ہے، ان کا کہنا تھا کہ یہ فلم صرف بچوں کے لئے نہیں ہے بلکہ پوری فیملی کے لئے ہے۔

ان کا کہنا تھا کہ پہلی دفعہ پاکستان میں سپر ہیرو کا تصور آرہا ہے جو چلے گا نہیں بلکہ دوڑے گا، فلم میں بچوں کے ذریعے بہادری اور ملک وقوم کیلئے کچھ کرگزرنے کا پیغام دیا گیا ہے۔

انہوں نے کہا کہ فلم گانے اور جزبات سے بھرپور ہے ، فلم کے ڈائیلاگ کو والدین اور بچے الگ الگ طرح سے لینگے، انہوں نے کہا ہر بچے کا اپنا سپر ہیرو ہوتا ہے جیسے چیلنج نہیں کیا جاسکتا ۔

ایک سوال کے جواب میں ان کا کہنا تھا کہ کسی نہ کسی کو جمپ لگانا پڑھتا ہے ، میں ان لوگوں میں سے ہوں جو پہلے جمپ لگاتے ہیں اور بعد میں سوچتے ہیں پہلے ڈاکومنٹری بناتی تھیں سب کہتےتھے پاکستان میں نہیں بن سکتی، لیکن بارہ سال بعد مجھے آسکر ایوارڈ ملا۔

پروگرام ایلیونتھ آر میں اینکر پرسن وسیم بادامی سے خصوصی گفتگو کرتے ہوئے اے آروائی ڈیجیٹل نیٹ ورک کے صدر اور سی ای او سلمان اقبال کا کہنا ہےتین بہادر میں بچے سپر ہیرو ہیں، آئندہ سال اے آروائی فلمز نو فلمیں لا رہاہے۔

سلمان اقبال کا کہنا تھا کہ ہمیں پاکستانی ہونے پر فخر ہونا چاہیئے، اے آر وائی ہر دو ماہ بعد ایک فلم بنا رہا ہے ۔

ان کا کہنا تھا کہ یہ ایک مختلف انداز کی فلم ہوگی، پانچ سال میں پاکستان کی فلمی صنعت بھارت کے برابر ہوگی۔

شرمین عبید کی خدمات کو سرہاتے ہوئے اے آروائی ڈیجیٹل نیٹ ورک کے صدر اور سی ای او سلمان اقبال نے کہا کہ شرمین عبید نے اس فلم کے لئے بہت محنت کی ہے ۔

پروگرام میں گفتگو کرتے ہوئے اداکار و ہدایتکار یار نواز کا کہنا تھا کہ یہ تین نہیں چار بہادر ہیں ،شرمین عبید بھی ایک بہادر ہیں جنہوں نے یہ قدم اٹھایا، ان کا کہنا تھا کہ اس موضوع پر میں بھی سکتا تھا۔

ان کا کہنا تھا کہ فلم بنانے یہی سوچ ہوتی ہے کہ لوگ زیادہ سے زیادہ آئیں، انہوں نے کہا کہ  فلم میں اپنا پن رکھا ہے اپنے علاقے رکھے ہیں اس وقت لوگوں کو اپنی فلم چاہیے ، انہوں نے کہا کہ شرمین کو ایسے نظریہ کے انتخاب پر میں چوتھا بہادر سمجھتا ہوں۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں