The news is by your side.

Advertisement

فیصلہ کرنا ہوگا کہ ملک کو لبرل ریاست بنانا ہے یا مذہبی ریاست، الطاف حسین

ایم کیو ایم انٹر نیشنل سیکریٹریٹ میں خطاب کرتے ہوئے الطاف حسین نے کہا ہے اب گومگوں کی کیفیت سے باہر نکل کر مستقبل کے بارے میں فیصلہ کرنا ہوگا کہ ملک کو لبرل ریاست بنانا ہے یا مذہبی ریاست ان کا کہنا تھا زندہ قومیں ماضی کی غلطیوں سے سبق سیکھتی ہیں۔

سقوط ڈھاکہ سے قبل بھی اجتماعی غفلت طاری تھی اور آج بھی غفلت کا مظاہرہ کیا جارہا ہے ۔ ان کا کہنا تھا بلوچستان میں علیحدگی کی تحریک چل رہی ہے ،خیبر پختونخواہ میں ڈیورنڈ لائن کا تنازع ہے۔

اندرون سندھ سندھو دیش تحریک کے حمایتی موجود ہیں ماضی میں گریٹر پنجاب کے منصوبے کا انکشاف بھی ہوا ۔۔ الطاف حسین نے کہا اردو بولنے والوں میں بھی یہ احساس جنم لے رہا ہے کہ انکا مستقبل کیا ہوگا ، الطاف حسین کا کہنا تھا پاکستان بین الاقوامی سطح پر تنہائی کا شکار ہوتا جارہا ہے پاکستان بچانے کیلئے اب فیصلے کرنا ہونگے۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں