The news is by your side.

Advertisement

لاہور:سانحہ یوحنا آباد میں جلائے گئے نعیم کے قتل کا مقدمہ درج

لاہور: سانحہ یوحنا آباد مین جلائے گئے نعیم کے قتل کا مقدمہ اسکے بھائی سلیم کی مدعیت میں تھانہ نشتر ٹاون میں درج کر لیا گیا ہے، یوحنا آباد میں دھماکے کے بعد مظاہرین نے بربریت کی مثالیں قائم کردیں۔

سانحہ یوحنا آباد مین جلائے گئے نعیم کے قتل کا مقدمہ اسکے بھائی سلیم کی مدعیت میں تھانہ نشتر ٹاون میں درج ہوگیا، مقدمہ نمبر تین سو تیرانوے بٹا پندرہ میں قتل سمیت دیگر سنگین دفعات شامل ہیں۔

قصور کا حافظ نعیم ایلومونیم کی کھڑکیاں لگاتا تھا، نعیم کے دوست کا کہنا ہے کہ کام کی غرض سے نعیم یوحنا آباد گیا تھا کہ وہاں دھماکہ ہوا اور بعد میں مشتعل لوگوں نے اسے زندہ جلا ڈالا، حافظ نعیم چیختا رہا کہ وہ دہشتگرد نہیں،پتھر دل لوگ اسے پٹتا اور جلتا دیکھ کر موبائل پر تصویریں بناتے رہے۔

نعیم کیساتھ ایک اور شخص یوحنا آباد دھماکے کے بعد مظاہرین کا نشانہ بنا، دوانسان جل رہے تھےاور لوگ موبائل پر تصویریں بنا رہےتھے، اس پربھی بس نہ کی لاشوں کوبھی گھسیٹتے فیروز پور روڈ پرلائے اور نعیم کی لاش کو میٹروبس کے جنگلے سے لٹکا دیا۔

Print Friendly, PDF & Email

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں