لاہور:ماڈل ٹاؤن کی سڑکیں بند کرنے کیخلاف درخواست کی سماعت -
The news is by your side.

Advertisement

لاہور:ماڈل ٹاؤن کی سڑکیں بند کرنے کیخلاف درخواست کی سماعت

لاہور : لاہور ہائیکورٹ کے جسٹس خالد محمود خان نے پیٹرول پمپس کی بندش اور سڑکوں پرکنٹینرز لگا کر راستوں کی بندش کے خلاف دائر درخواستوں کی سماعت سے معذرت کر لی اور کہا کہ پرامن احتجاج ہر شہری کا آئینی حق ہے،عدالت نے ریمارکس دیتے ہوئے کہا کہ کوئی بھی ذی شعور شخص طاہر القادری کی تقریر کی حمایت نہیں کرسکتا، عدالت میں یہ موقف اختیار کیا گیا کہ پاکستان ہے تو ہم ہیں، اس کی حفاظت سب پر فرض ہے

لاہور ہائیکورٹ کے جسٹس خالد محمود خان نے کیس کی سماعت کا آغاز کیا تو تحریک انصاف کے وکلاءکی جانب سے عدالت کو بتایا گیا کہ آزادی مارچ کو روکنے کے لئے حکومت اوچھے ہتھکنڈوں پر اتر آئی ہے اور شہر بھر کے پیٹرول پمپس کو زبردستی بند کرا دیا گیا ہے جبکہ شاہراوں پر کنٹینرز لگا کر راستے بند کر کے عوام کی تذلیل کی جا رہی ہے۔

جس پر عدالت نے ریمارکس دیتے ہوئے کہا کہ اکٹھے ہونا اور احتجاج کرنا شہریوں کا حق ہے مگر عوام کو اشتعال دلانا کسی صورت قبول نہیں کیا جا سکتا۔جسٹس خالد محمود خان نے مزیدریمارکس دیتے ہوئے کہا کہ طاہر القادری نے جو تقریر کی اس کی کوئی ذی شعور آدمی حمائت نہیں کر سکتا۔

میڈیا نے جس طرح اس تقریر کی کوریج کی حیران کن ہے ملک کے وجود سے ہی ہم سب کا وجود ہے۔اکٹھے ہونا اور احتجاج کرنا شہریوں کا بنیادی حق ہے مگر اشتعال دلانا کسی صورت قبول نہیں کیا جا سکتا۔ جسٹس خالد محمود خان نے کیس کیس سماعت سے معذرت کرتے ہوئے درخواست مزید سماعت کے لئے چیف جسٹس لاہور ہائیکورٹ کو بھجوا دی۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں