متنازع فلم دی انٹرویو دیکھنے والوں کو گولی مارنے کا حکم -
The news is by your side.

Advertisement

متنازع فلم دی انٹرویو دیکھنے والوں کو گولی مارنے کا حکم

نیویارک: متنازع فلم دی انٹرویو نے انٹرنیٹ پر دھوم مچادی ہے، فلم نے اکتیس ملین ڈالرز کا آن لائن بزنس کرکے ریکارڈ قائم کرلیا ہے، شمالی کوریا میں فلم دیکھنے والوں کو فوراََ ہی گولی ماردینے کا حکم دیا گیا ہے۔

سونی پکچرز کی متنازع فلم دی انٹرویو جسے ریلیز سے قبل ہی مشکلات کا سامنا کرنا پڑا، شمالی کوریا اس فلم سے ناراض ہے، فلم کا اسکرپٹ بھی چوری ہوا مگر پھر بھی دی انٹرویو نے ریکارڈز توڑے۔

فلم نے صرف دس دن میں اکتیس ملین ڈالرز کا شاندار بزنس کیا جبکہ اب تک ساڑھے چار ملین لوگوں سے اسے انٹرنیٹ پر دیکھا ہے، اس متنازع فلم نے اپنی ریلیز کے صرف چار دن بعد ہی آن لائن پر اس اسٹوڈیو کی آج تک کی سب سے زیادہ بزنس کرنے والی فلم کا ریکارڈ بھی اپنے پاس محفوظ کیا۔

یہ فلم شمالی کوریا کے رہنماء کم جونگ ان کے قتل کی فرضی سازش پر مبنی ہے، جسے دیکھنے پر شمالی کوریا میں پابندی عائد ہے اور حکومت نے اس فلم کو دیکھنے والے کو گولی مارنے کا حکم دیا ہے۔

یہ پہلی بار ہے کہ کوئی بھی فلم سینما گھروں اور آن لائن پر ایک ساتھ دکھائی جا رہی ہے، سونی پکچرز نے شمالی کوریا کے سربراہ کم جونگ ان پر بنائی جانے والی اس مزاحیہ فلم کو سائبر حملے کے بعد ملنے والی دھمکیوں کے پیش نظر ریلیز نہ کرنے کا فیصلہ کیا تھا۔

لیکن بعد میں سونی پکچرز نے اپنے فیصلے پر نظرثانی کرتے ہوئے اس کامیڈی فلم کو کرسمس کے دن ریلیز کیا تھا۔

یہ فلم بنائے جانے پرسونی پکچرز کی ویب سائٹ ہیک کرلی گئی تھی اور گزشتہ دنوں ساڑھے نو گھنٹے تک شمالی کوریا میں بھی انٹرنیٹ سروس معطل رہی تھی۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں