The news is by your side.

Advertisement

مرزا غالب کی آج 216ویں سالگرہ منائی جا رہی ہے

اردوشاعری میں تخیل کی بلندی اور شوخی فکرکو جلا بخشنے والے عظیم المرتبت ادیب و شاعر مرزا اسد اللہ خان غالب کا آج دو سو سولہواں یوم پیدائش ہے۔


                                                    پوچھتے ہیں وہ کہ غالب کون ہے
                                           کوئی بتلائے کے ہم بتلائیں کیا 

مرزا اسد اللہ خان غالب بر صغیر کے معروف قد آور شاعر ہیں، غالب کی آفاقی شاعری اردو شاعری کے لئے لازم وملزوم قرار پائی، غالب ستائیس دسمبر سترہ سو ستانوے کو ہندوستان کے شہر آگرہ میں پیدا ہوئے۔


                                                  آہ کو چاہئے ایک عمراثر ہونے تک 
                                             کون جیتا ہے تیر زلف کے سر ہونےتک
                                             ہم نے مانا کہ تغافل نہ کرو گے لیکن
                                            
خاک ہوجائیں گے ہم تم کو خبر ہونےتک

غالب نے اردو کے علاوہ فارسی اور ترکی میں بھی شاعری کی تاہم انکی وجہ شہرت اردو شاعری بنی، غالب اردو شاعری کے وہ کردار ہیں جن پر بے شمار تحریریں لکھی گئیں، سینکڑوں فلمیں ڈرامے اور اسٹیج شوز تیار ہوئے جبکہ پر اثر شاعری کی بدولت بے شمار فلموں کو عوامی پذیرائی ملی،غالب خود اپنی زندگی کا احاطہ کرتے ہوئے کہتے ہیں کہ


                                    یہ نہ تھی ہماری قسمت کہ وصال یار ہوتا
            اگر اور جیتے رہتے یہی انتظار ہوتا
                  یہ مسائل تصوف یہ تیرا بیان غالب 
             تجھے ہم ولی سمجھتے جو نہ بادہ خوار ہوتا


غالب خوشحالی کے ساتھ تنگ دست زندگی سے نبرد آزما رہنے کے بعد پندرہ فروری اٹھارہ سو انہتر کو اکہتر سال کی عمر میں دہلی میں انتقال کرگئے۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں