The news is by your side.

Advertisement

مریخ پر جانے والے افراد میں ایک خوش قسمت پاکستانی متنخب

مریخ پر بنائی جانے والی کالونی کے لئے دنیا بھر سے 100 شہریوں کا انتخاب کرلیا گیا ہے، جس میں ایک پاکستانی نے بھی اپنی جگہ بنالی ہے۔

غیر ملکی خبر رساں ادارے کے مطابق مریخ پر بنائی جانے والی کالونی کے لئے دنیا بھر سے 100 شہریوں کا انتخاب کیا گیا ہے لیکن مریخ تک ان کا یہ سفر یکطرفہ ہی ہوگا، واپسی کا کوئی امکان نہیں ہوگا۔

مریخ پر قائم کی جانے والی کالونی میں ایک پاکستانی شہری ریجنالڈ فولڈزکو بھی منتخب کر لیا گیا ہے۔

پاکستانی شہری  ریجنالڈ فولڈز کا نام ان 100 افراد میں شامل ہے، جو مریخ پر رہائش کے خواہش مند ہیں، ریجلنڈ کا کہنا تھا کہ وہ چاہتے ہیں کہ ان کا نام بھی ان افراد کی لسٹ میں شامل ہو، جنہوں نے پہلی مرتبہ سیارہ مریخ پر قدم رکھا تھا۔

ایک رپورٹ کے مطابق 61 سالہ ریجنالڈ فولڈز 1992 میں ریٹائرمنٹ سے قبل پاکستان ایئرفورس میں بطور ہیلی کاپٹر پائلٹ فرائض سرانجام دے رہے تھے، جو 42 سال کی عمر میں اپنی اہلیہ کے ہمراہ کینیڈا منتقل ہوگئے تھے، مارس ون ویب سائٹ پر دی گئی فولڈز کی پروفائل کے مطابق انفنٹری آفیسر کی حیثیت سے اپنے 22 سالہ ملٹری ریکارڈ کی بدولت وہ کسی بھی قسم کے حالات میں اپنی بقاءکی جنگ لڑ سکتے ہیں۔

ان کا دعویٰ ہے کہ فوج میں انھیں ہر قسم کے مشکل حالات کا مقابلہ کرنے اور ثابت قدم رہنے کی تربیت دی گئی ہے۔ اور وہ اپنی پیشہ وارانہ قابلیت کے باعث کسی بھی حالات میں رہنے کا ہُنر جانتے ہیں۔

ان کا مزید کہنا ہے کہ وہ تلاش اور دریافت کے سفر میں آسمانوں سے بھی آگے جانا چاہتے ہیں۔ ‘میرے لیے ناممکن جیسا کوئی لفظ نہیں ہے اور ایسا کوئی کام نہیں ہے، جو میں نہیں کرسکتا، مجھے مارس ون ٹیم پسند ہے اور ہمارا مشن ہے کہ ہم ایسا کام کرکے جائیں کہ آنے والے ہزاروں سال تک دنیا میں ہمیں یاد رکھا جائے۔

یاد رہے دنیا بھر سے ایسے 2 لاکھ سے زائد افراد نے مریخ پر رہائش کیلئے درخواستیں بھیجیں تھیں، یہ درخواستیں کوپن ہیگن کی ایک کمپنی نے طلب کی تھیں مگر ان میں سے صرف 100 افراد کو منتخب کیا گیا، جنہیں ہمیشہ کے لئے مریخ پر بنائی جانے والی انسانی کالونی میں بھیجا جائے گا۔

واضح رہے کہ سرخ سیارہ مریخ زمین سے 55 ملین کلومیٹر (چھ ماہ سفر) کے فاصلے پر ہے۔اس مشن کو مکمل ہونے میں تقریباً سات ماہ لگیں گے، جبکہ ایم آئی ٹی کے حالیہ مطالعے میں اس بات کا انکشاف کیا گیا ہے کہ اگر خلانورد لینڈنگ میں کامیاب ہو بھی جائیں تب بھی موجودہ جدید ٹیکنالوجی کی بدولت وہ وہاں صرف 68 دن تک زندہ رہ سکتے ہیں۔

Print Friendly, PDF & Email

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں