site
stats
عالمی خبریں

مصر کے ریسورٹس میں باحجاب خواتین پر پابندی

قاہرہ: مصر میں حجاب خواتین کے لئے مسئلہ بن گیا، کئی ریسورٹس میں با حجاب خواتین کے داخلے پر پابندی عائد کردی گئی ہے۔

یہ امرانتہائی حیرت کا باعث ہے کیونکہ مصر ایک اسلامی ملک ہے جس کی آٹھ کروڑ میں سے 90 فیصد آبادی مسلمان ہے۔

ذرائع کے مطابق مصر کے کئی رستورانوں اور ریسورٹس نےباحجاب خواتین پرپابندی عائد کردی ہے جس پرسوشل میڈیا میں انتہائی تشویش پائی جارہی ہے۔ ذرائع کا کہنا ہے کہ یہ پابندی نئی نہیں ہے، شرم الشیخ اور غردقہ جیسے شہر جہاں غیرملکی کثیر تعداد میں موجود رہتے ہیں حجاب پرپابندی عائد ہے۔

حجاب کی حمایت کرنے والی 28 سالہ ریم نے انکشاف کیا ہے کہ انہیں مختلف ساحلوں پر بنے کئے ریسورٹس میں داخلے سے منع کیا گیا جس کی وجہ حجاب بتائی گئی ہے۔

ان کا کہنا تھا کہ’’ریسورٹس کی جانب سے موقف اختیار کیا جاتا ہے کہ دیگر مہمان حجاب میں ملبوس خواتین کے بارے میں شکایت کرتے ہیں ، انہوں نے مزید کہا کہ اس قسم کی پالیسیاں لکھی نہیں جاتی‘‘۔

ایک اور خاتون سیلی نشاۃ جو کہ دو بچوں کی والدہ ہیں ان کا کہنا ہے کہ انہیں بیچ کلب ہاؤس میں حجاب کے سبب داخلے سے روک دیا گیا۔

ان کا کہنا تھا کہ’’یہ رویہ توہین آمیز ہے ہم اپنے ملک میں ہیں اور ہم اس سےخوش نہیں ہیں، انہوں نے مزید کہا کہ ایسا سلوک تو امریکہ میں بھی ان کے ساتھ روا نہیں رکھا گیا‘‘۔

اس معاملے پر مصر کی وزارتِ سیاحت کے ترجمان راشا عزیزی نے ایک نجی ٹی وی سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ حکومت کی جانب سے اس قسم کی کوپابندی عائد نہیں کی گئی۔ انہوں نے عوام سے درخواست کی کہ ایسا معتصبانہ رویہ اختیا کرنے والے ریسورٹس اور ہوٹلوں کے بارے میں شکایت درج کرائیں تاکہ ان کے خلاف کاروائی کی جاسکے۔

Print Friendly, PDF & Email
20

Comments

comments

اس ویب سائیٹ پر موجود تمام تحریری مواد کے جملہ حقوق@2018 اے آروائی نیوز کے نام محفوظ ہیں

To Top