site
stats
انقلاب مارچ

ملک میں مرغ پالنےاوربیچنےکےکاروباربھی حکمرانوں کےہیں، طاہرالقادری

اسلام آباد: طاہرالقادری نے کہا کہ کشکول توڑنے کی بات کرنے والوں نے پوری قوم کے ہاتھ میں کشکول تھمادیا ہے۔

اسلام آباد میں انقلابی دھرنے سے خطاب میں پاکستان عوامی تحریک کے سربراہ ڈاکٹر علامہ طاہرالقادری کا کہنا تھا کہ ہماری جدوجہد رنگ لارہی ہے ایک فقیر آواز لگا رہا تھا کہ اللہ کے نام پر دو ، گو نواز گو ۔ جس پر عوام نے اس پر پیسوں کی بارش کردی ۔

ان کا کہنا تھا کہ اس ملک کرپشن کا عالم یہ ہے کہ صوبہ پنجاب نہیں پورا ملک تباہ ہو رہا ہے، 2007میں فوجی آمریت کا دور تھا،جب پنجاب سرفہرست تھا، اس وقت بھی شہباز شریف وزیراعلیٰ تھے، جس صوبے کی آمدنی سب سے زیادہ ہوتی تھی آج اس کی آمدنی کم کیسے ہوئی ۔ آج یہ صوبہ 452ارب روپے کا مقروض ہوگیا ہے ۔

طاہرالقادری نے کہا کہ جو لوگ کشکول توڑنے کی بات کرتے تھے انہوں نے چھوٹوں بڑوں سب کے ہاتھ مین کشکول تھمادیا ہے، موجودہ حکومت پر 94 فیصد بیرونی قرضہ ہے ،ملکی دولے کرپشن اور عیاشی پر خرچ ہورہی ہے،وفاق اور صوبے قرضوں پر چل رہے ہیں ، حکمران جمہوریت کا مطلب سمجھائیں، آئین کا مطلب سمجھائیں۔،

انہوں نے کہا کہ میری جنگ ایسی جمہوریت کے لئے ہے کہ جہاں ایک چھوٹا شخص بڑے شخص کا محاسبہ کر سکے ، غریب امیر سے سوال پوچھ سکے، ہر شہری کا حق ہے کہ بڑے بڑے طاقتور سے سوال پوچھ سکے، یہاں غلامی ہے جمہوریت نام کی کوئی چیز نہیں ہے، ہم اس غلامی کا خاتمہ چاہتے ہیں ۔

انہوں نے کہا کہ میں آج تک اپنے لئے کچھ نہیں بنایا سب منہاج کے نام کردیا ہے، ن لیگ میری برطانیہ میں کوئی جائیداد ثابت نہ کرسکی ۔

طاہرالقادری نے خطاب کرتےہوئے کہا کہ پورے پنجاب میں مرغی اور اس کے انڈوں کے قیمت یہ حکمران خود طے کرتے ہیں، حکمران جان بوجھ کر ریٹ اوپر کرتے ہیں، جب اپنا سارا مال بیچ دیتے ہی تب ریٹ سستہ کردیتے ہیں۔ان حکمرانوں نے پولٹی فارم ، سولر انرجی ، دودھ  کا کاروبار، اسٹیل کا کاروبار سب اپنے ہاتھ میں رکھا ہوا ہے ۔

ان کا کہنا تھا کہ بجلی مہنگی کردی گئی کیونکہ وہاں بھی کرپشن عروج پر ہے، نیپرا میں بے۔اے پاس کو کرپشن کرنے کے لئے نیپرا کا ممبرٹیرف لگا دیا گیا، نیپرا کا ریگولر چیئرمین آج تک نہیں لگایا گیا ۔ اس بے۔اے پاس کو ہی نگراں چیئرمین لگادیا گیا ہے ۔

طاہر القادری نے اسلام آباد میں دھرنے کے شرکاءسے خطاب کے دوران بتایا کہ لاہور میں ان کے بیٹے کے گھر بیٹی کی پیدائش ہو گئی ہے اور وہ دادا بن گئے ہیں۔

Print Friendly, PDF & Email
20

Comments

comments

اس ویب سائیٹ پر موجود تمام تحریری مواد کے جملہ حقوق@2018 اے آروائی نیوز کے نام محفوظ ہیں

To Top