site
stats
انٹرٹینمںٹ

مولا جٹ سلطان راہی‘ کو بچھڑے انیس برس بیت گئے’

لاہور: لالی وڈ لیجنڈ سلطان راہی کو ہم سے بچھڑے انیس برس بیت گئے، سات سو سے زائد فلموں میں اداکاری کے جوہردکھانے کے باعث ان کا نام گینز بک آف ورلڈ رکارڈ میں درج ہے۔

سن 1938 میں بھارتی ریاست اترپردیس میں آنکھ کھولنے والے محمد سلطان نے فلمی سفر کا آغاز 1959 میں اضافی اداکار کے طورپرکیا، 1960ء کی دہائی تک سلطان راہی کو فلمی دنیا میں کوئی خاطر خواہ کامیابی نہ ملی، 1972ء میں سلطان راہی کو فلم ’بشیرا‘ سے کامیابی ملی، جس نے انہیں شہرت کی بلندیوں پر پہنچا دیا، اسی سال ان کی تین فلموں کی ڈائمنڈ جوبلی بھی منائی گئی۔

سات سو سے زائد پنجابی اور اردو فلموں میں کام کرنے پر ان کا نام گینز بک آف ورلڈ رکارڈ میں درج ہے۔ سلطان راہی کی چند مشہور فلموں میں مولاجٹ، شیر خان، چن وریام، کالے چور، وحشی گجر، کالیا، اور گاڈ فادر شامل ہیں۔

1996 میں ان کی آخری فلم سخی بادشاہ ریلیز ہوئی، جس کا گیت ’کی دم دا بھرسہ یاردم آوئے نہ آوئے‘ ان کے زندگی کا آخری گیت بن گیا۔
سلطان راہی کئی دہائیوں تک لالی وڈ انڈسٹری پر چھائے رہے، انہیں نوجنوری انیس سو چھیانوے کو نامعلوم افراد نے گولی مارکرہمیشہ کےلئے مداحوں سے دور کردیا، ان کے قاتل آج تک پکڑے نہ جاسکے۔

Print Friendly, PDF & Email
20

Comments

comments

اس ویب سائیٹ پر موجود تمام تحریری مواد کے جملہ حقوق@2018 اے آروائی نیوز کے نام محفوظ ہیں

To Top