The news is by your side.

Advertisement

واہگہ بارڈر کےقریب دھماکا، 37افراد جاں بحق

لاہور: پاک بھارت واہگہ بارڈر کے قریب دھماکے میں 37افراد جاں بحق اور رینجرز اہلکاروں سمیت متعدد افراد زخمی ہوگئے، ہلاکتوں میں اضافے کا خدشہ ہے، امدادی کارروائی جاری ہیں۔

اے آر وائی نی نمائندہ رابعہ نور کے مطابق دھماکہ پرچم اُتارنے کی تقریب کے بعد ہوا جبکہ ابتدائی اطلاعات ہیں کہ دھماکہ سلینڈر پھٹنے سے ہوا تاہم ابتدائی طورپر حتمی طورپر کچھ نہیں کہا جاسکتا، دھماکے کے نتیجے میں دو رینجرز اہلکار سمیت  سیتیئس افراد جاں بحق اور متعدد ذخمی ہوئے ہیں، زخمیوں میں سات افراد کی حالت تشویش ناک ہے جبکہ زخمیوں میں رینجرز اہلکار بھی شامل ہیں ۔

دھماکے کے باعث واہگہ بارڈر چیک پوسٹ کے ارد گرد موجود متعدد عارضی دکانوں اور گاڑیوں کو نقصان بھی پہنچا ہے جبکہ رینجرز اہلکاروں نے علاقے کو گھیرے میں لے لیا۔

دھماکے کے بعد اسپتال میں ایمرجنسی نافذ کردی گئی ہے جبکہ کئی زخمیوں کوشالامار اسپتال منتقل کیاجارہاہے، اسپتال ذرائع کے مطابق ایمبولینسیں مسلسل زخمیوں کو لارہی ہیں اور زخمیوں کی کثیر تعداد کی وجہ سےامدادی کارروائیوں میں مشکلات کا سامناہے ۔

اے آر وائی نیوز لاہور کے بیورو چیف عارف حمید بھٹی کا  کہنا تھا کہ ذرائع سے یہ خبر سامنے آئی ہے کہ دھماکہ خودکش تھا، ان کا کہنا تھا کہ حملہ آور کے پاس تقریباَ 25کلو دھماکہ خیز مواد موجود تھا تاہم پرچم اُتارنے کے تقریب کے اختتام پر حملہ آور نے خود کو دھماکے سے اُڑھادیا۔

آئی جی پنجاب مشتاق سکھیرا نے 47 افراد کے جاں بحق جبکہ 70 سے زائد افراد کے ذخمی ہونے کی تصدیق کرتے ہوئے بتایا کہ واہگہ بارڈر کے قریب دھماکا خود کش حملہ ہوسکتا ہے۔ان کہنا تھا حملہ آور کی عمر 22 سے 25 سال ہے، چیکنگ کی جگہ پر خودکش حملہ آور نے خود کو دھماکے سے اُڑایا۔آئی جی پنجاب نے کہا کہ انٹیلیجنس اطلات تھیں کہ دہشت گردی کی کاروائی ہوسکتی ہے

دوسری جانب دھماکہ کی ذمینداری کلعدم جنداللہ نے قبول کرلی ، دھماکے کے ملک کے دیگر شہروں میں سیکیورٹی ہائی الرٹ کردی گئی۔

Print Friendly, PDF & Email

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں