site
stats
اہم ترین

وفاقی کابینہ کا اجلاس:سیلاب کیلئے بیرونی امداد نہ لینےکا فیصلہ

اسلام آباد: وفاقی کابینہ نے سیلاب سے نمٹنے کے لئے بیرونی امداد نہ لینےکا فیصلہ کرلیا ہے، اجلاس میں وزراء بجلی کی اووربلنگ پر پھٹ پڑے، وزیراعظم کی زیرِصدارت وفاقی کابینہ کااہم اجلاس ہواجس میں امن وامان اورسیلابی صورتحال سمیت مختلف امورزیرغورآئے۔

اجلاس میں سیلاب متاثرہ علاقوں کےعوامی نمائندوں پرمشتمل کمیٹیاں بنانے کا فیصلہ کیا گیا ہے جو ریلیف کےلیے تجاویزدے گی ساتھ یہ بھی طے ہوا کہ اس مرحلے پرعالمی امداد نہیں لی جائے گی اجلاس کو بریفنگ میں بتایا گیا سیلاب سے پنجاب کے دس اضلاع متاثر ہوئے۔،

سیلاب کے باعث جھنگ، چنیوٹ اورحافظ آباد میں سب سے زیادہ تباہی ہوئی ، سیلابی ریلوں سے دو سو چوہتر افرادجاں بحق ہوگئے جبکہ تنتالیس ہزارگھروں کو نقصان پہنچا اور گیارہ لاکھ افراد متاثر ہوئے۔ اجلاس میں ریلیف کوششوں پرمسلح افواج سمیت مختلف محکموں خصوصا ریکسیو ڈبل ون ڈبل ٹوکےکردار کو سراہا گیا۔

وزیر اعظم نے خطاب میں کہا کہ سیلاب اوربارشوں کے سبب ہونے والے نقصان  کو کم کرنے پر سرمایہ کاری ہونی چاہیئے، وزیر اعظم نے ہدایت کی کہ جو رقم معاوضے اورتعمیرِنو پرخرچ ہورہی ہے وہ سیلاب سے بچاؤ کی تدابیرپرلگائی جائے ۔

کابینہ میں بجلی چوروں کی سزاؤں میں اضافےکا بل بھی پیش کیاگیا، اس موقع پروفاقی وزراء بلوں میں اضافے پر پھٹ پڑے، وزراء نے شکوہ کیا۔

    وزراء کاکہنا تھا کہ بجلی کے بل عوام کی برداشت سے باہر ہو چکے ہیں جس پر وزیراعظم نےنوٹس لیتے ہوئےتحقیقاتی کمیٹی قائم کردی۔

وفاقی کابینہ کے اجلاس میں  پاکستان تحریک ِ انصاف دھرنادینے والوں سے نمٹنے کے متعلق کوئی فیصلہ نہیں کیاجاسکا۔

Print Friendly, PDF & Email
20

Comments

comments

اس ویب سائیٹ پر موجود تمام تحریری مواد کے جملہ حقوق@2018 اے آروائی نیوز کے نام محفوظ ہیں

To Top