وہ 5 عظیم لیڈر جن کی طاقت ان کے وارثوں میں منتقل ہوئی -
The news is by your side.

Advertisement

وہ 5 عظیم لیڈر جن کی طاقت ان کے وارثوں میں منتقل ہوئی

دنیائے سیاست میں بہت سے واقع رونماء ہوئے ، جیسے چند ایسے سیاسی لیڈر بھی گزرے  جو خود تو عظیم مرتبے پر فائز تھے لیکن ان کے ان کی اولادیں بھی انہی کے نقش قدم پر چلتے ہوئے انہی کی طرح عظیم عہدے پر فائز ہوئے ، ہم یہ بھی کہہ سکتے ہیں کہ ان میں یہ صلاحیتیں وارثتی طور پر منتقل ہوئی ۔

بھارت کے پہلے وزیراعظم جواہرلال نہرو  17 سال تک وزیر اعظم کے فرائض نبہاتے رہے، (1947-1964) تک وزیر اعظم کی فرائض نبہانے والے جواہرلال نہرو مشہوری کی وجہ یہ بھی تھی کہ بھارت کی آزادی کے وقت وہ تمام تحریک میں پیش پیش تھے۔ان کی بے پناہ مقبولیت ہی وہ وجہ تھی جس کے باعث وہ آخری سانس تک بھارت پر حکمرانی کرتے رہے۔

بعد ازاں 1966  میں جواہرلال نہرو کی صحابزادی اندرا گاندھی کو کانگریس کی قیادت ملی ، جس کے بعد اُسی سال وہ بھارت کی تیسرے وزیراعظم کے عہدے پر فائز ہوئی ، یہ عہدہ ان کے پاس 1977 تک رہا ، اندرا گاندھی دوسری مرتبہ 1980 میں وزیراعظم بنی اور مزید چال سال 1984 تک عہدے پر فائز رہیں۔1984 میں اندرا کو قتل کردیا گیا۔

بعد ازاں اندرا گاندھی کی کرسی ان کے بیٹے راجیو گاندھی کو مل گئی جو کہ 1984  سے 1989 تک وزیراعظم رہے۔

جارج ہاربٹ واکر بش امریکہ کے 41ویں صدر تھے۔وہ  1989 سے 1993 سپر پاور  امریکہ کے جمہوری صدر رہے ،بعد ازاں ان کی تمام صلاحیتیں اُن کے بیٹے جارج ڈیبلو بش میں منتقل ہوئیں۔جارج بش 2001 میں امریکہ کے 43 ویں صدر منتخب ہوئے  جارج بش 2009 تک امریکہ کے صدر رہے ان کی جگہ موجودہ وزیراعظم بارک اوباما نے  لی ہے۔

شیخ مجیب الرحمان آزاد بنگلادیش کے بانی ، پہلے صدر اور دوسرے وزیراعظم تھے۔وہ بنگلادیش کی آزادی کے لئے جدوجہد کرنے والی تحریک عوامی لیگ کے قائد بھی تھے۔ 1975 میں مجیب الرحمان کو ان کے خاندان کے ہمراہ قتل کردیا گیا ، مجیب الرحمان کے لواحیقین میں صرف دو بیٹیاں شیخ حسینہ اور ریحانہ بچیں جو جرمنی میں قیام پزیر تھیں۔

عمر میں بڑی ہونے کے وجہ سے شیخ حسینہ میں اپنے والد جیسی تمام صلاحیتیں قدرتی طور پر موجود تھیں، 1981 میں شیخ حسینہ کو عوامی لیگ کی قیادت سونپ دی گئی۔بنگلادیش کی موجودہ وزیراعظم بھی شیخ حسینہ ہی ہیں ۔

شامی سیاستدان حفیظ الاسد 1971 سے 2000شام کے صدر رہےانہوں نے 30 سال تک شام میں حکومت کی ، انکے انتقال کے ان کی وراثت کے حقدار ان کے بیٹے بشارالاسد  والد کی کرسی پر بیٹھنے کے قابل ہوگئے تھے۔سن 2000 میں بشارالاسد اپنے والد کے عہدے پر فائز ہوئے اور وہ موجودہ  شام میں جاری خانہ جنگی کا مقابلہ کررہے ہیں ۔

ذوالفقار علی بھٹو پاکستان پیپلز پارٹی کے بانی ، پاکستان کے چوتھے صدر اور نویں  وزیراعظم تھے۔اس عظیم لیڈر نے 7 سال تک پاکستان میں حکومت کی ۔1977 میں فوجی انقلاب کے نتیجے ان کی حکومت کا خاتمہ ہوا ۔ذوالفقارعلی بھٹو کے انقتال کے بعد ان کی وارث بینظر بھٹو سیاست میں آئیں ، بینظر بھٹو دو مرتبہ پاکستانی کی وزیراعظم بنیں، 2007 میں ان کو قتل کردیا گیا ۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں