پاکستان میں ایبولا سے بچاؤ کے اقدامات تاحال نامکمل -
The news is by your side.

Advertisement

پاکستان میں ایبولا سے بچاؤ کے اقدامات تاحال نامکمل

ایبولا کا نام دنیا بھر میں دہشت کی علامت بنتا جارہا ہے، حال ہی میں ایک ایبولا سے ممکنہ طور پر متاثرہ مریض کی ہلاکت کے بعد اس کی موجودگی پاکستان میں بھی محسوس کی جارہی ہے ۔

دنیا بھر میں دہشت کی علامت بننے والا ایبولاوائرس کے خطرے کی زد میں اب پاکستان بھی ہے، اس سے بچاؤ کیلئے اجلاس بھی ہوئے اور احکامات بھی جاری ہوئے مگر بہت سے سوال اب بھی جواب طلب ہے جس میں پہلا سوال تو یہ ہےایبولا وائرس سے بچاو کیلئے حکومتی سطح پر کیا انتظامات کئے گئے؟

عالمی ادارے صحت کی ہدایات پر اب تک عمل نہ کرنے کی وجہ کیا تھی؟  کیا تمام بین الاقوامی ہوائی اڈوں پر خصوصی سکینرز کی تنصیب مُکمل کرلی گئی ؟ کیا عملے کی تربیت اور اسپتالوں میں خصوصی ایبولا آئسولیشن وارڈ‘ کا قیام عمل میں آگیا؟

کیا مسافروں کی سفری دستاویزات کی جانچ اور خاص طور پر متاثرہ ممالک سے آنے والے افراد کی جانچ خصوصی انتظامات کئے گئے ہیں ؟

کیا ایبولا کے مریضوں کو ہسپتال منتقل کرنے کے لیے خصوصی ایمبولینسز فراہم کی گئیں؟

۔اسلام آباد ائرپورٹ پر لگاتھرمو سکینر اب تک کیوں خراب ہے ۔ یہ ہے وہ سوالات جن کا مثبت جواب ہی ایبولا وائرس پرقابو پانے میں مددگار ہوسکتا ہے۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں