site
stats
اہم ترین

پنجاب حکومت کی مالی بے ضابطگیوں کیخلاف وائٹ پیپر جاری

لاہور: اپوزیشن لیڈر میاں محمودالرشید نے پنجاب حکومت کی مالی بے ضابطگیوں کے خلاف کے خلاف وائیٹ پیپر جاری کردیا ہے، جس میں نشاندہی کی گئی ہے کہ پہلے سے 452 ارب کے مقروض صوبے نے مزید 385 ملین ڈالرز کے قرضوں کی درخواست دے دی ہے۔

میاں محمودالرشید نے وائیٹ پیپر میں کہا ہے کہ پاکستان کا سب سے بڑا صوبہ پنجاب 452 ارب کا مقروض ہے جبکہ حکومت نے مزید 385 ملین ڈالرز کے قرضوں کی درخواست دے دی، نئے قرضوں کے لئے ایشین ڈویلپمنٹ بینک کو 350 ملین ڈالرز جبکہ 35 ملین ڈالر ز قرضوں کی درخواست انٹر نیشنل فنڈ فار ایگریکلچر ڈویلپمنٹ کو دی گئی ہے۔

وائیٹ پیپر میں کہا گیا ہے کہ پنجاب کے تین شہروں لاہور، راولپنڈی اور ملتان میں میٹرو بس کے میگا پراجیکٹس کے لئے 100ارب صوبہ اپنے وسائل سے خرچ کرسکتا ہے تو شہری ترقی اور بہبود کے نام پر بیرونی قرضے کیوں لئے جارہے ہیں؟جبکہ ان منصوبوں کا غربت کے خاتمے سے کوئی تعلق بھی نہیں ۔

اپوزیشن لیڈر نے کہا کہ سستی روٹی، فوڈ پروگرام جیسے 10 ناکام منصوبوں پر 100 ارب ضائع کئے گئے، 2008ءکے این ایف سی ایوارڈ کے تحت پنجاب کو ہر سال 100۔ ارب روپے مل رہے ہیں۔ مگر گذشتہ چھ سال سے برسر اقتدار مسلم لیگ ن عوام کی صحت اور تعلیم کی سہولتوں میں بہتری نہیں لاسکی۔

میاں محمود الرشید نے کہا کہ قرضوں کا بوجھ نہ چھوڑنے کے دعویدار وزیراعلیٰ نے پنجاب کو ذاتی جاگیر بنالیا ہے، جس میں منتخب ارکان کی بجائے خاندان کے افراد بیوروکریسی کو ہدایات دیتے ہیں۔

Print Friendly, PDF & Email
20

Comments

comments

اس ویب سائیٹ پر موجود تمام تحریری مواد کے جملہ حقوق@2018 اے آروائی نیوز کے نام محفوظ ہیں

To Top