The news is by your side.

Advertisement

پولیس نے مسیحی جوڑے کو ’توہین‘ کے الزام میں قتل ہونے سے بچالیا

مکی: پنجاب پولیس نے بھپرے ہوئے مجمعے سے مسیحی جوڑے کی جان بچالی جس پر توہین کا الزام تھا، بعد ازان اشتعال پھیلانے کےالزام میں ایک مولوی کو بھی گرفتار کیا گیا۔

ڈسٹرکٹ پولیس چیف سہیل ظفر چھٹہ کے مطابق غیر تعلیم یافتہ مسیحی جوڑے نے کہیں سے ایک پرانا پینافلیکس حاصل کیا جسے وہ سونے کے لئے گھر میں بچھانے کا کام لیتے تھے، پینافلیکس پر کئی کالجز کے نام اور سلوگن درج تھے جن میں سے کچھ عبارات کے بارے میں کہا گیا ہے کہ وہ قرآنی آیات تھیں۔

پولیس کے مطابق ایک مقامی نائی اور دو مولویوں نے مسیحی جوڑے کے خلاف عوام کو اکسایا جو کہ جانتے بھی نہیں تھے کہ ان سے کیا غلطی سر زد ہورہی ہے۔

مولویوں کے اکسانے پر علاقے کی آبادی نے اکھٹے ہو کرمجمعے کو بے رحمی سے مارنا شروع کیا اور نزدیک تھا کہ وہ انہیں ہلاک ہی کردیتے لیکن پولیس نے موقع پر مداخلت کرتے ہوئے مسیحی جوڑے کی جان بچائی اورانہیں لاہور منتقل کرکے مسیحی رہنماؤں کے حوالے کیا۔

پولیس نے اشتعال پھیلانے والے ایک مولوی کو گرفتارکرلیا ہے جبکہ ایک مولوی اور نائی تاحال مفرور ہیں، کچھ مقامی افراد کا کہنا ہے کہ مذکورہ نائی مسیحی جوڑے کا مکان ہتھیانا چاہتا تھا لہذا اس نے یہ سارا کھیل کھیلا۔

Print Friendly, PDF & Email

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں