site
stats
سندھ

پیٹرولیم بحران پر جلد قابو پایا جائے، ایم کیو ایم رابطہ کمیٹی

کراچی : متحدہ قومی موومنٹ کی رابطہ کمیٹی نے کراچی اور اسلام آباد سمیت ملک بھر میں پیٹرولیم مصنوعات کے مصنوعی بحران پر گہری تشویش کا اظہار کیاہے اورمطالبہ کیاہے کہ پیٹرولیم مصنوعات کے مصنوعی بحران سے نمٹنے کے لئے ہنگامی بنیادوں پراقدامات کیے جائیں۔

ایک بیان میں رابطہ کمیٹی نے کہاکہ کراچی سمیت صوبہ پنجاب اور اسلام آباد کے بیشتر پیٹرول پمپس پر پیٹرول دستیاب نہیں ہے لیکن وفاقی وصوبائی سطح پراس بحران سے نمٹنے کیلئے کسی بھی قسم کے کوئی عملی اقدامات نظرنہیں آ رہے۔

انہوں نے کہا کہ اگر اس بحران پر قابو نہ پایا گیا تواس کے باعث قومی خزانے میں70فیصدسے زائدریونیوجمع کروانے والاشہرجو کہ پاکستان کامعاشی حب بھی ہے نہ صرف مفلوج ہوکر رہ جائے گابلکہ اس وجہ سے ملکی معیشت کو نقصان پہنچنے کا اندیشہ ہے ۔

رابطہ کمیٹی نے کہاکہ ملک بھرخصوصا پنجاب کے عوام پیٹرول کے اس بحران کے باعث ا پنے روزمعمولات انجام دینے سے قاصر ہیں ۔

پیٹرولیم مصنوعات کی کی عدم دستیابی کے باعث شہری اپنے دفاتر ،طلبہ اپنے تعلیمی اداروں اور کاروباری حضرات مارکیٹس اور تجارتی مراکز نہیں پہنچ پارہے ہیں جس کے باعث زندگی مفلوج ہو کررہ گئی ہے ۔

پیٹرول کا یہ بحران کراچی سمیت ملک بھر کے عوام کے خصوصاًکارروباری افرادکے لئے نہایت تشویش کا باعث ہے۔ رابطہ کمیٹی نے کہاکہ ملک بھر میں پیٹرولیم مصنوعات کے حالیہ بحران کو ختم کرنے کے لئے ہنگامی بنیادوں پراقدامات کیے جائیں۔

رابطہ کمیٹی نے کہاکہ ملک کا سب سے بڑا صوبہ اس وقت پیٹرول کی عدم دستیابی کے باعث سخت مشکلات کا شکار ہے لیکن حکومتی ارکان کے روئیے کودیکھ کرایسامحسوس ہوتاہے کہ موجودہ حکمران ملک کے عوام سے ذرہ برابربھی ہمدردی نہیں رکھتے جس کے باعث وہ اس بحران کو ختم کرنے کے لئے سنجیدگی کا مظاہرہ نہیں کر رہے ہیں۔

رابطہ کمیٹی نے کہاکہ ایم کیوایم کاملک کے عوام سے چولی دامن کاساتھ ہے لہٰذاایم کیوایم عوام کوکسی صورت تنہاء نہیں چھوڑے گی اورہرفورم پران کے جائز حق کے لئے آوازبلندکرتی رہے گی۔

رابطہ کمیٹی نے وزیراعظم پاکستان میاں محمدنوازشریف ،وفاقی وزیرپیٹرولیم شاہد خاقان عباسی، گورنرسندھ ڈاکٹرعشرت العبادخان اورسندھ کی صوبائی حکومت سے مطالبہ کیاکہ پنجاب سمیت ملک بھر میں پیٹرولیم کے سنگین بحران سے نمٹنے کے لئے بروقت اقدامات کیے جائیں۔

Print Friendly, PDF & Email
20

Comments

comments

اس ویب سائیٹ پر موجود تمام تحریری مواد کے جملہ حقوق@2018 اے آروائی نیوز کے نام محفوظ ہیں

To Top