The news is by your side.

Advertisement

پی پی کے سینتالیس سالہ سیاسی کیریئرکی باگ ڈور اب تیسری نسل سنبھالے گی

کراچی: پاکستان پیپلزپارٹی کےسینتالیس سالہ سیاسی کیریئرکی  باگ ڈور تیسری نسل نے سنبھال لی۔ پیپلزپارٹی کے بانی ذوالفقار علی بھٹو سے بلاول بھٹوزرداری تک کے طویل سفرمیں کئی نشیب و فراز آئے تاہم پیپلز پارٹی کی قیادت نے ہر معاملے کا ڈٹ کر مقابلہ کیا۔

بے نظیر بھٹو کی شہادت کے بعد اب پاکستان پیپلز پارٹی کی تیسری نسل پارٹی کی قیادت کے لئے سرگرم عمل ہے،طویل جدوجہد اور پھر ذوالفقار علی بھٹو کا عدالتی قتل، شاہ نواز بھٹو کا سازشی قتل، مرتضیٰ بھٹو کا سامراجی قتل اور منظم سازش کے تحت محترمہ بے نظیر بھٹو کا قتل، ان واقعات نے پاکستان پیپلز پارٹی کو کمزور کرنے کے بجائے دوام بخشا۔

تیس نومبر انیس سو سڑسٹھ کو پاکستان پیپلز پارٹی کے قیام کےبعدانقلابی منشور اور بین الاقوامی شہرت کی حامل جرأت مند قیادت کی بدولت پارٹی نے بہت کم عرصے میں زبردست عوامی حمایت اور مقبولیت حاصل کرلی۔

ذوالفقار بھٹو کی پھانسی کے کچھ عرصے کے بعد پارٹی کی باگ ڈور بینظیر بھٹو نے سنبھالی اور مارشل لاء کے بعد الیکشن کے نتیجے میں وہ وزیراعظم بنیں۔ بے نظیر دوہزارآٹھ میں آصف علی زرداری پپلزپارٹی کے شریک چیئرمین بنے۔ پیپلزپارٹی کی تیسری نسل میں پارٹی کی قیادت نوجوان بلاول بھٹو زرداری کے ہاتھ میں ہے۔ ذوالفقارعلی بھٹو سیاست میں آئے اور چھا گئے اب دیکھنا یہ ہے کہ نوجوان قیادت کہاں تک بھٹوکادیاہوا درس کارکنان تک پہنچاتی ہے۔

Print Friendly, PDF & Email

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں