The news is by your side.

Advertisement

کراچی جیل:کروڑوں روپے سیکیورٹی بےسود ،دہشتگرد اوجھل! کیسے

کراچی: سینٹرل جیل منصوبہ تو ناکام ہوگیا لیکن کروڑوں روپے سیکیورٹی انتظامات کے باوجود دہستگردوں نے منصوبے کو کس طرح آخری مراحل تک پہنچادیا؟ سیکیورٹی اداروں کی کارکردگی ایک بار پھر مشکوک ہوگئی ہے۔

کراچی سینٹرل جیل سرنگ کھودنے والے دہشتگردوں نے سلیمانی ٹوپی کی نہ نظر آنے والی اصطلاح سچ ثابت کردکھائی، طویل عرصے سے سیکیورٹی کے عدم توازن کے مسئلے نے کراچی کو دہشت اور وحست کا مرکز بنا رکھا ہے۔

پکڑے گئے دہشتگردوں کو قید رکھنے والے سینٹرل جیل پر دہشتگردوں کے حملے کی اطلاعات کے بعد سیکیورٹی کے نام پر کروڑوں روپے کا خرچہ کیا گیا، جیل کے اطراف حفاظتی حصار کیلئے نئی دیوار کی تعمیر کی گئی، بیس نئی چوکیاں اور پچاس سی سی ٹی کیمروں کی تنصیب کی گئی لیکن کوئی بھی اقدام دہشتگردوں کوابتدائی مرحلے میں نہ پکڑ سکا۔

دہشتگردوں پر نظر رکھنے کیلئے سو اسپیشل کمانڈوز کی دن رات کی ڈیوٹیاں، سیکیورٹی پر مامور اہلکاروں کو دوسو بلٹ پروف جیکٹس، جدید ہتھیار، ہیلمٹ، جدید میٹل ڈیٹیکٹر اور نائٹ وژن گلاسسز بھی فراہم کئے گئے ساتھ ہی ساتھ جیل کے اطراف موبائل فون جیمرز بھی لگا دیئے گئے۔

ان تمام اقدامات کے باوجود دہشت گرد کس طرح چھ ماہ تک مسلسل نظر رکھنے والے سیکیورٹی اہلکاروں کی نظروں سے اوجھل رہے؟

Print Friendly, PDF & Email

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں