site
stats
اہم ترین

کراچی: سپر ہائی وے لنک روڈحادثے کی ابتدائی رپورٹ تیار

کراچی: سپر ہائی وے لنک روڈ حادثے کی ابتدائی رپورٹ میں بتایا گیا ہے کہ زیادہ جانی نقصان ایمرجنسی دروازہ نہ ہونے اور فائر بریگیڈ کے تاخیر سے پہنچنے کی وجہ سے ہوا۔

لنک روڈ ٹریفک حادثے کی ابتدائی رپورٹ تیار کرلی گئی ہے، رپورٹ کے مطابق بس نے بلال کالونی سے شکار پور کیلئے سفر شروع کیا اور لنک روڈ پر حادثہ ہوگیا، حادثے کے بعد بس کا ایک دروازہ بند ہوگیا، بس مالک نے ایمرجنسی دروازہ بند کرکے مسافر سیٹ لگا دی تھی، ایمرجنسی راستہ نہ ہونے سے بس سے باہر کھلنے کا راستہ نہیں تھا۔

ابتدائی رپورٹ کے مطابق آگ لگنے پر فوری فائر بریگیڈ کو اطلاع دی گئی لیکن دو گھنٹے بعد فائر بریگیڈ پہنچی جبکہ اسٹیل مل سے پندرہ منٹ میں فائر بریگیڈ حادثے کی جگہ پہنچ سکتی تھی لیکن اسٹیل مل سے فائر بریگیڈ نہیں بھیجی گئی، حادثہ کسی دہشتگردی کا واقعہ نہیں بلکہ غفلت کا نتیجہ ہے۔

یاد رہے کہ کراچی کے قریب سپرہائی وے پر مسافر بس اور آئل ٹینکر میں تصادم کے نتیجے میں سڑسٹھ مسافر زندگی کی بازی ہار گئے، کئی مسافروں کی لاش بری طرح جھلسنے کے باعث ناقابلِ شناخت ہیں۔

کراچی سے شکارپور جانے والی بدقسمت مسافر بس سپرہائی وے لنک روڈ پر آئل ٹینکر سے ٹکرا گئی، حادثہ کے فوراً بعد بس میں آگ بھڑک اُٹھی، فائربریگیڈ کاعملے کی روایتی تاخیر کے سبب بس مکمل طور پر جل گئی، بس میں آنے اور جانے کا ایک ہی دروازہ تھا، دوسرے دروازے اور ایمرجنسی گیٹ سِیل کرکےاضافی سیٹیں نصب کردی گئی تھی۔

آگ لگنے کے بعد ایک دروازہ ہونے کے باعث مسافروں کو نکلنے کی مہلت ہی نہ ملی اوروہ جھلس کرجاں بحق ہوگئے۔

کمشنر کراچی شعیب صدیقی کا کہنا تھا کہ حادثے کے ذمہ داروں سے سختی سے نمٹاجائے گا، ڈاکٹرسیمی جمالی کا کہنا تھا کہ حادثے میں جھلسنے کی وجہ سے متعددلاشیں ناقابل شناخت ہیں، اُن کی شناخت ڈی این اے ٹیسٹ کے ذریعے کی جائے گی۔

Print Friendly, PDF & Email
20

Comments

comments

اس ویب سائیٹ پر موجود تمام تحریری مواد کے جملہ حقوق@2018 اے آروائی نیوز کے نام محفوظ ہیں

To Top