site
stats
بلوچستان

کوئٹہ میں دہشت گردی کے خلاف شٹر ڈاؤن ہڑتال

 کوئٹہ: کوئٹہ میں دہشت گردی کے واقعات کے خلاف آج ہڑتال کی جارہی ہے، ٹریفک سڑکوں سے غائب  جبکہ کاروبار زندگی معطل ہے اور تعلیمی ادارے بھی بند ہے۔

گزشتہ روز ہزارہ ڈیمو کرٹیک پارٹی کی جانب سے ہزار گنجی واقعہ پر کوئٹہ شہر میں ہڑتال کی کال دی تھی اور تین روزہ سوگ کا اعلان کیا ہے جبکہ دھماکوں اور فائرنگ کے واقعات کے خلاف بلوچستان بار نے آج عدالتی کارروائی کے بائیکاٹ کا اعلان کردیا ہے ۔

ہڑتال کے باعث علمدار روڈ ، مشن روڈ ،کرانی سمیت مختلف علاقوں میں دکانیں اور کاروباری مراکز بند ہیں اور ان علاقوں میں سوگ کی کیفیت ہے۔

بلوچستان بار ایسو سی ایشن نے گزشتہ روز شہر میں دہشت گردی کے واقعات کے خلاف آج عدالتی کارروائی کے بائیکاٹ کا اعلان کردیا ہے۔بار کے صدر بلال کاسی کے مطابق کوئی وکیل عدالتوں میں پیش نہیں ہوگا۔

جمیعت علما اسلام ف کے مرکزی امیر مولانا فضل الرحمان پر حملے کے خلاف نمازِ جمعہ کے بعد احتجاجی ریلی اور مظاہرے کا اعلان کیا گیا ہے۔

دوسری جانب گزشتہ روز کوئٹہ میں امن وامان کی صورتحال کے باعث شہر میں سیکورٹی بڑھادی گئی ہے، مختلف مقامات پر پولیس اور بلوچستان کانسٹبلری کے اہلکار تعینات ہیں۔

گذشتہ روز کوئٹہ میں 13افرادجاں بحق اور40سےزائد زخمی ہوگئےتھے۔

 کوئٹہ کے علاقے ہزار گنجی میں نامعلوم افراد نے گاڑی پر فائرنگ کردی ،جس میں ہزارہ برادری کے آٹھ افراد جاں بحق اور متعدد زخمی ہوگئے تھے ،دہشت گردوں نے کوئٹہ کی قمبرانی روڈ پر سیکیورٹی فورسزکےقافلے کو بم سے نشانہ بنایا، جس میں دو افراد جاں بحق ہوئے۔

 شام ڈھلے کوئٹہ میں جمعیت علما اسلام کے جلسے کے بعد مولانا فضل الرحمان کی گاڑٰی پر خودکش حملہ کیا گیا، جس میں مولانا فضل الرحمان بال بال بچ گئے تھے۔

Print Friendly, PDF & Email
20

Comments

comments

اس ویب سائیٹ پر موجود تمام تحریری مواد کے جملہ حقوق@2018 اے آروائی نیوز کے نام محفوظ ہیں

To Top