The news is by your side.

Advertisement

ہمارے بچے خوفزدہ نہیں ہیں، عمران خان

پشاور: عمران خان نے کہا ہے کہ آرمی پبلک اسکول کے بچوں کا حوصلہ دیکھ کر خوشی ہوئی ہم یہی پیغام دینا چاہتے ہیں کہ ہمارے بچے خوفزدہ نہیں ہیں۔

ان خیالات کا اظہار پاکستان تحریک انصاف کر سربراہ عمرامن خان نے پشاور میں پریس کانفرنس سے کترتے ہوئے کیا۔ انہوں نے کہا کہ میں یہاں بچوں کی حوصلہ افزائی کرنے آیا تھا لیکن بچوں نے میری  حوصلہ افزائی کردی۔

ان کا کہنا تھا کہ وہ پہلے ہی دن آنا چاہتے تھے لیکن آرمی چیف جنرل راحیل شریف  کی آمد کی وجہ سے انہیں آنے کی اجازت نہیں دی گئی۔

انہوں نے یہ بھی کہا کہ یہ حملہ ایک بزدلانہ کارروائی تھی کہ بچے اسکول جانا چھوڑ دیں لیکن بچوں کے عزم نے دہشت گردوں کو منہ توڑجواب دیا۔

انہوں نے اسکول کے باہر پیش آنے والے واقعے پرافسوس کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ یہ تاثر دینے کی کوشش کی گئی کہ اسکول کے باہر بد مزگی ہوئی، جن کے گھروں میں سانحہ ہوا انہیں  احتجاج  کا حق حاصل ہے۔

عمران خان کا کہنا تھا کہ بغیر تعلیم کے دنیا کی کوئی قوم ترقی نہیں کرسکتی، جو میرے ہاتھ میں تھا کیا اور آئندہ بھی کرتا رہوں گا۔

ان کا کہنا تھا کہ 126 دن کا احتجاج چار حلقوں میں دھاندلی کی تحقیقات کے لئے کیا۔

ان کا کہنا تھا کہ جب کمیشن کی رپورٹ نے 34 ہزار ووٹ جعلی قرار دے دیئے تو پھر ایاز صادق کو استعفیٰ  دے دینا چاہیے کیونکہ ان کی بحیثیت اسپیکر قومی اسمبلی میں موجودگی پاکستان کے لئے سبکی کا باعث ہے۔ انہوں نے مطالبہ کیا کہ فوری طور پر جوڈیشل کمیشن کا قیام عمل میں لایا جائے۔

انہوں نے اعلان کیا کہ 18 جنوری کو آئندہ کا لائحہ عمل کا اعلان کریں گے ، تحریکِ انصاف کی حکومت بلدیاتی انتخابات کے لئے تیار بیٹھی ہے لیکن افسوس کہ الیکشن کمیشن کی تیاری مکمل نہیں ہے۔ انہوں نے کہا کہ حلقہ بندیوں کے مسائل سندھ اور پنجاب میں تھے خیبر پختونخواہ میں ایسا کوئی مسئلہ نہیں ہے۔

ایک سوال کے جواب میں انہوں نے کہا کہ آئی ڈی پیز دو طرح کے ہیں ایک افغانی اور دوسرے شمالی علاقہ جات سے آئے ہوئے ہیں جن کا پورا بوجھ صوبائی حکومت کو اٹھانا پڑرہا ہے۔

Print Friendly, PDF & Email

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں