یورپی ممالک کی 550 خواتین داعش میں شامل، برطانوی تھنک ٹینک -
The news is by your side.

Advertisement

یورپی ممالک کی 550 خواتین داعش میں شامل، برطانوی تھنک ٹینک

لندن :برطانوی ادارے کے مطابق یورپی ممالک کی پانچ سو پچاس خواتین نے داعش میں شمولیت اختیار کر رکھی ہے۔

برطانوی ادارے انسٹی ٹیوٹ فار اسٹریٹیجک ڈائیلاگ کے رپورٹ کے مطابق یورپی ممالک کی ساڑھے پانچ سو خواتین جہاد کی غرض سے سے شام اور عراق میں موجود ہیں ، جہاں انھوں نے شدت پسند تنظیم داعش میں شمولیت اختیار کرلی ہے۔

رپورٹ میں مزید کہا گیا ہے کہ عراق و شام میں لڑنے والی خواتین جہادیوں کی واپسی مغربی ممالک کے لیے بڑا خطرہ ہے، ان کی سرگرمیوں سے ان ممالک میں شدت پسندی کو فروغ حاصل ہوگا جبکہ دہشت گردی کے خطرات بہت زیادہ بڑھ جائینگے۔

یورپی خواتین کی دولتِ اسلامیہ میں شمولیت کے معاملے پر تشویش میں اضافہ ہو رہا ہے، یہ پہلی بار ہے کہ خواتین دہشت گردوں  کے بارے میں مفصل رپورٹ شائع ہوئی ہے۔

اس رپورٹ میں ان خواتین کے شدت پسندوں کی صفوں میں شامل ہونے اور انکے سوشل میڈیا میں کردار کا بھی جائزہ لیا گیا ہے، اس کے علاوہ اس سوال کے جواب کو ڈھونڈا گیا ہے کہ آخر کیا وجہ ہے کہ اتنی بڑی تعداد میں خواتین سب کچھ چھوڑ کر دولتِ اسلامیہ میں شمولیت اختیار کرنےگئی ہیں۔

رپورٹ میں اس سلسلے میں کئی وجوہات کی نشاندہی بھی کی ہے اور بتایا گیا ہے کہ دولتِ اسلامیہ میں شمولیت اختیار کرنے کی وجوہات میں سے ایک ذاتی رنجشیں اور دوسری جہادیوں سے شادی کی خواہش ہے۔

رپورٹ میں یہ بھی کہا گیا ہے کہ خطرات کا اندازہ نہ ہونے کے باعث ان خواتین میں سے بڑی تعداد واپس نہیں لوٹی ہے۔ رپورٹ میں مزید کہا گیا ہے کہ ایسی جہادی خواتین کو واپس برطانیہ آ رہی ہیں ملک کے لیے خطرہ ثابت ہو سکتی ہیں۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں