The news is by your side.

Advertisement

بھارت کی 105 سالہ درختوں کی ماں

اولاد نہ ہونا کسی شادی شدہ جوڑے کے لیے بہت بڑی محرومی بن سکتا ہے تاہم بھارت میں ایسے ہی ایک محروم جوڑے نے اپنی محرومی کا نہایت انوکھا اور فائدہ مند متبادل ڈھونڈ نکالا۔

بھارتی ریاست کرناٹک کا رہائشی یہ جوڑا جب 25 سال تک اولاد سے محروم رہا تو انہوں نے درخت اگانے شروع کردیے۔ وہ ان درختوں کی بالکل اپنے بچوں کی طرح دیکھ بھال کرتے ہیں۔

اس جوڑے کے اگائے ہوئے درختوں کی تعداد 300 ہوچکی ہے جو افزائش پا کر اب سایہ اور پھل فراہم کر رہے ہیں۔

ان درختوں نے کرناٹک کے اس گاؤں کو نہایت ہرا بھر اور سر سبز بنا دیا ہے جہاں یہ جوڑا رہائش پذیر ہے۔

درختوں کو اگانے والی تھماکا جن کی عمر 105 سال ہے، ان درختوں کی ماں کہلاتی ہیں۔ وہ کہتی ہیں، ’یہ ہماری قسمت ہے کہ ہمیں اولاد نہ ہوسکی۔ لیکن ان کی جگہ ہم نے درخت اگائے اور بالکل اپنے بچوں کی طرح ان کی دیکھ بھال کی اور انہیں بڑا کیا‘۔

زمین کو سرسبز بنانے کی اس بے مثال کوشش کے اعتراف میں اس جوڑے کو اب تک کئی قومی اعزازات سے نواز جا چکا ہے ہے۔ یہی نہیں بالکل ناخواندہ ہونے کے باوجود اب ان دونوں کا نام بھارت کے تعلیمی نصاب میں بھی شامل ہے۔


خبر کے بارے میں اپنی رائے کا اظہار کمنٹس میں کریں۔ مذکورہ معلومات کو زیادہ سے زیادہ لوگوں تک پہچانے کے لیے سوشل میڈیا پر شیئر کریں۔

Print Friendly, PDF & Email

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں