گیارہ بھارتی ایٹمی سائنسدان کی پُراسرارموت -
The news is by your side.

Advertisement

گیارہ بھارتی ایٹمی سائنسدان کی پُراسرارموت

نئی دہلی : بھارت میں اٹیمی پروگرام سے وابستہ سائنسدانوں کی پراسرار موت کا سلسلہ جاری ہے، چارسالوں کے دوران گیارہ اٹیمی سائنسدان زندگی سے ہاتھ دھوبیٹھے لیکن بھارتی حکومت خاموش ہے.

پاکستان کے خلاف زہر اگلنے اور پاکستان کے ایٹمی پروگرام کا واویلا کرنے والی بھارتی حکومت اورمیڈیا نے اپنے ایٹمی سائنسدانوں کی موت پرچپ سادھ لی ہے، چار سال میں گیارہ بھارتی سائنسدان پُراسرار حالات میں دنیا سے گزر گئے۔

بھارتی اخباراکنامک ٹائمز کے مطابق دوہزار نو میں کائیگا اٹامک پاوراسٹیشن پر کام کرنے والے سائنسدان لوکا ناتھن صبح کی سیر کے لئے گئے اور لاپتہ ہوگئے، پانچ دن بعد دریا سے ان کی لاش ملی۔

اس واقعے سے چند روز قبل نیوکلیئر پاورکارپوریشن کے سائنسدان روی میول ایک جنگل میں مردہ پائے گئے۔

دوہزاردس میں نیوکلیئر انجینئر ایم آئر اپنی رہائش گاہ میں مردہ پائے گئے، دوہزارگیارہ میں سائنسدان اوما راﺅ کی پراسرار حالات میں موت ہوئی۔

بیلسٹک سبمرین پراجیکٹ پر کام کرنے والے دو سائنسدان ریلوے لائن پر مردہ پائے گئے، جوہری سائنسدانوں کی اموات کا سلسلہ نیا نہیں، انیس سوسڑسٹھ میں بھارتی جوہری پروگرام کے خالق ہومی جہانگیر بھابھا بھی پراسرار طیارہ حادثے میں دنیا سے رخصت ہوئے تھے.

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں