گیارہ سالہ کمسن ملازمہ سے اجتماعی زیادتی، وزیر اعلیٰ کا نوٹس، 2 ملزمان گرفتار Karachi
The news is by your side.

Advertisement

کراچی: 11 سالہ کمسن ملازمہ سے اجتماعی زیادتی، 2 ملزمان گرفتار

کراچی: شہر قائد کے علاقے ملیر میں 11 سالہ گھریلو ملازمہ کے ساتھ اجتماعی زیادتی کا واقعہ پیش آنے کے بعد وزیر اعلیٰ نے واقعے کا نوٹس لیا تو پولیس متحرک ہوئی اور دو ملزمان کو گرفتار کرلیا، بااثرافراد نے معافی کے لیے والدین پر دباؤ ڈالنا شروع کردیا۔

تفصیلات کے مطابق کشمور کے علاقے کندھ کوٹ سے تعلق رکھنے والی 11 سالہ گھریلو ملازمہ دو ماہ قبل کراچی آئی تھی اور ملیر کے ایک گھر میں کام کاج کررہی تھی تاہم دو روز قبل بچی کے ساتھ اجتماعی زیادتی کا واقعہ پیش آیا۔

نمائندہ اے آر وائی علی حسن ملک کے مطابق کمسن ملازمہ کی حالت غیر ہونے پر ملزمان نے بچی کو کندھ کوٹ منتقل کیا اور اہل خانہ کو آواز نہ اٹھانے کی دھمکی دی، بچی نے ہوش میں آتے ہی رونا شروع کردیا جس کے بعد اُسے اسپتال منتقل کیا گیا۔

اسپتال پہنچنے پر ملازمہ کا مڈیکل کیا گیا جس میں زیادتی ثابت ہوگئی، ڈاکٹر کی تجویز پر والدین نے ایم ایل او کو تمام تفصیلات سے آگاہ کیا تو پولیس نےواقعے کا مقدمہ تھانہ اے سیکشن کندھ کوٹ میں درج کرلیا، جس میں راہب سوہرانی، ثاقب علی،خان محمد، مہزب، شان، شیراز اور اپنو نامی ملزمان کو نامزد کیا گیا ہے۔

خبر سامنے آنے پر وزیر اعلیٰ سندھ اور پولیس چیف نے نوٹس لیتے ہوئے آئی جی کندھ کوٹ کو ملزمان کی گرفتاری کے لیے ہدایات جاری کیں۔ وزیر اعلیٰ سندھ اور پولیس چیف کے احکامات کے بعد پولیس نے کارروائی کرتے ہوئے ملیر سے دو ملزمان کو گرفتار کرلیا جبکہ ایس ایس پی کندھ کوٹ نے مزید ملزمان کی گرفتاری کے لیے خصوصی ٹیمیں تشکیل دے دیں۔

کمسن ملازمہ سے زیادتی کا مقدمہ درج ہونے کے بعد بااثر وڈیرے متاثرہ لڑکی کے والدین کے پاس پہنچے اور لین دین کی پیش کش کرتے ہوئے ایف آئی آر واپس لینے کے لیے دباؤ ڈالا۔

نمائندہ اے آر وائی کے مطابق بااثر وڈیرے نے متاثرہ لڑکی کے والد کو دھمکی دی کہ آپ صلاح کریں ورنہ ہماری برادری اور علاقے سے نکل جائیں۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں