The news is by your side.

Advertisement

’گوادر پورٹ پر 1200 مقامی افراد کام کررہے ہیں مستقبل میں مزید افراد کو روزگار ملے گا‘

اسلام آباد : عاصم سلیم باجوہ نے کہا ہے کہ دہشت گردی کے باعث افغانستان کے بعد پاکستان کا سب سے زیادہ نقصان ہوا، اس علاقے میں بہت لڑائی دیکھ اب ہمیں ترقی کی ضرورت ہے۔

ان خیالات کا اظہار چیئرمین سی پیک اتھارٹی عاصم سلیم باجوہ نے اے آر وائی کے پروگرام پاور پلے میں گفتگو کرتے ہوئے کیا، انہوں نے کہا کہ گوادر بندرگاہ پر مختلف ممالک کے جہاز آرہے ہیں، ہم ترقی کے بھوکے ہیں اس کےلیے محنت کررہے ہیں۔

عاصم سلیم باجوہ کا کہنا تھا کہ ہم اس خطے میں امن چاہتے ہیں، اس علاقے میں بہت لڑائی دیکھ لی اب ہمیں ترقی کی ضرورت ہے۔

انہوں نے کہا کہ افرادی قوت پر ہمیں زیادہ توجہ دینی ہوگی، گوادر پورٹ میں 1200 مقامی لوگ کام کررہے ہیں اور آگے جاکر مزید مقامی لوگوں کو روزگار مہیا ہوگا۔

چیئرمین سی پیک اتھارٹی نے بتایا کہ سی پیک کا چین کے ساتھ 40 چال کا معاہدہ ہے، سی پیک میں سرمایہ کاری آرہی ہے۔

انہوں نے بتایا کہ گوادر میں ایک ایئرپورٹ بھی تیار کیا جارہا ہے اور اسپتال ،نرسنگ انسٹی ٹیویٹ ،میڈیکل کالج بھی بنائے جارہے ہیں، یہاں پانی کا مسئلہ ہے اسی لیے ڈیم بھی تعمیر کررہے ہیں۔

عاصم سلیم باجوہ نے اے آر وائی نیوز کے پروگرام میں بتایا کہ گوادر میں بجلی کےلیے ایک گرڈ اسٹیشن بنایا جارہا ہے اور اس گرڈ اسٹیشن کو وزیراعظم کی ہدایت پر نیشنل گرڈ سے منسلک کیا جائے گا۔

ان کا مزید کہنا تھا کہ توانائی کی کمی سی پیک سے پوری ہوئی، سی پیک کے ذریعے سکھر سے ملتان موٹر وے بنا، اب سی پیک کا مشرقی روٹ مکمل ہوگیا ہے۔

Comments

یہ بھی پڑھیں