The news is by your side.

Advertisement

8 اپریل: پاکستان کی سیاست میں ایک اہم اور یادگار دن

آئین میں اٹھارہویں ترمیم کو پاکستان کی سیاسی تاریخ کا ایک اہم سنگِ میل کہا جاتا ہے جس نے صدارتی نظام سے اختیارات کو دوبارہ پارلیمان تک پہنچایا۔

پاکستان کی قومی اسمبلی میں آج ہی کے دن اٹھارہویں آئینی ترمیم پیش کی گئی تھی جسے 15 اپریل 2010ء کو سینیٹ نے پاس کیا اور صدرِ پاکستان کی حیثیت سے آصف علی زرداری کے دستخط سے یہ ترمیم 19 اپریل کو آئین کا حصّہ بنی۔

یہ جنرل ضیاء کا دور تھا جب آٹھویں ترمیم کے ذریعے وزیرِاعظم کے اختیارات صدر کو منتقل ہوئے اور اسمبلی توڑنے کا صوابدیدی اختیار صدر کو مل گیا۔ آپ نے آرٹیکل 58-2 (b) کا ذکر سنا ہی ہو گا۔ اسی کے ذریعے ملک کا صدر اسمبلی برطرف کرسکتا تھا۔ ملکی سیاست میں اس صوابدیدی اختیار کو جنرل ضیاء الحق نے وزیرِ اعظم محمد خان جونیجو کی حکومت ختم کرنے کے لیے استعمال کیا، صدر غلام اسحٰق خان نے محترمہ بے نظیر بھٹو اور نواز شریف کی حکومتوں اور پھر صدر فاروق لغاری نے بے نظیر بھٹو کی دوسری حکومت کو برطرف کرنے کے لیے استعمال کیا تھا۔

سیاسیات اور آئین و قانون کے ماہرین کے مطابق 18 ویں ترمیم نے ملک میں شراکتی وفاقی کلچر کو فروغ دیا اور یہ ترمیم سیاسی اتفاقِ رائے کا مظہر ہے۔ اس ترمیم نے مارشل لاء کے ادوار میں‌ کی گئی ترامیم کو ختم کرکے پارلیمانی اختیارات کو اس کی اصل شکل میں بحال کیا۔ اس ترمیم کو ملک کے تمام صوبوں کو اختیارات دے کر وفاق کو مضبوط کرنے کا ذریعہ کہا جاتا ہے۔

8 اپریل 2010ء کو قومی اسمبلی نے آمرانہ دور کی ترامیم ختم کرتے ہوئے دو تہائی اکثریت سے زیادہ ارکان کی حمایت سے بل کو منظور کیا تھا اور پارلیمانی جمہوریت بحال ہوئی تھی جس میں اہم اختیارات صدر سے وزیرِ اعظم کو منتقل ہوگئے۔ اس بل کی منظوری کو سیاسی جماعتیں تاریخی اقدام قرار دیتی ہیں۔

Comments

یہ بھی پڑھیں