The news is by your side.

Advertisement

کتنے فی صد افراد میں کرونا علامات ظاہر نہیں ہوتیں، ماہرین نے معلوم کر لیا

برن: سویٹزر لینڈ میں کی جانے والی ایک طبی تحقیق میں ماہرین نے یہ بات معلوم کر لی ہے کہ ایسے کتنے فی صد افراد ہوتے ہیں جنھیں کرونا وائرس لگنے کے بعد بھی علامات ظاہر نہیں ہوتیں۔

طبی جریدے پلوس میڈیسین میں شائع تحقیق کے مطابق مارچ سے جون کے دوران کی جانے والی تحقیقی رپورٹس کا تجزیہ کیا گیا جس میں معلوم ہوا کہ کرونا وائرس کے شکار ہر 10 میں سے 2 افراد میں بیماری کی علامات ظاہر نہیں ہوتیں۔

سوئٹزر لینڈ کی برن یونی ورسٹی کی اس تحقیق میں بتایا گیا ہے کہ 20 فی صد مریضوں میں علامات ظاہر نہیں ہوتیں لیکن طبی ماہرین نے کہا ہے کہ وہ پھر بھی اس بیماری کو دیگر افراد تک منتقل کر سکتے ہیں۔

ماہرین کا کہنا ہے کہ مریض میں علامات ظاہر ہوں یا نہ ہوں، وہ وائرس کو دیگر افراد تک منتقل کر سکتے ہیں، ان کا یہ بھی کہنا ہے کہ ایسے کچھ افراد میں علامات ہوتی ہیں مگر انھیں یہ اندازہ نہیں ہو پاتا کہ یہ کو وِڈ 19 کی علامات ہیں۔

دوسری طرف ہارورڈ میڈیکل اسکول کے ایک پروفیسر نے انکشاف کیا ہے کہ بغیر علامات والے کچھ افراد میں یہ وائرس ان کی جسمانی کارکردگی پر منفی اثرات مرتب کرتا رہتا ہے۔

تحقیق میں شامل ماہرین نے اس بات پر زور دیا کہ علامات کے بغیر بھی بیماری کے پھیلاؤ کا خطرہ ہے اس لیے ہاتھوں کی صفائی، سماجی دوری جیسی احتیاطی تدابیر اہمیت کے حامل ہیں۔

یاد رہے کہ اگست میں جنوبی کوریا میں ہونے والی ایک تحقیق میں کہا گیا تھا کہ بغیر علامات والے کرونا مریض وائرس کو اتنا ہی زیادہ آگے پھیلا سکتے ہیں جتنا علامات والے مریض۔ اس سے قبل اس حوالے سے شواہد محض مشاہدے پر مبنی تھے، مگر جنوبی کوریا والی تحقیق میں ٹھوس ثبوت سامنے آئے۔ معلوم ہوا کہ بغیر علامات والے مریضوں کی ناک، حلق اور پھیپھڑوں میں اتنا ہی وائرل لوڈ ہوتا ہے جتنا علامات والے مریضوں میں۔

واضح رہے کہ حالیہ تحقیق کے دوران محققین نے 6 سے 26 مارچ کے دوران بغیر علامات والے 193 مریضوں اور 110 علامات والے مریضوں کے لیے گئے نمونوں کا تجزیہ کیا تھا، تحقیق میں شامل بیش تر افراد نوجوان تھے اور ان کی اوسط عمر 25 سال تھی، ابتدائی طور پر 89 میں سے 30 فی صد کبھی بیمار نہیں ہوئے جب کہ 21 فی صد میں علامات نظر آئیں۔

Comments

یہ بھی پڑھیں