The news is by your side.

Advertisement

سندھ میں لاک ڈاؤن کا 32 واں روز، پولیس اہل کاروں کی ڈبل سواری پر بھی پابندی

کراچی: شہر قائد سمیت سندھ بھر میں لاک ڈاؤن 32 ویں روز بھی جاری ہے، لاک ڈاؤن کے دوران ڈبل سواری پر پابندی سے کوئی مستثنیٰ نہیں، پولیس حکام نے اہل کار و افسران کو بھی موٹر سائیکل پر ڈبل سواری سفر نہ کرنے کی ہدایت جاری کر دی۔

اے آر وائی نیوز کے مطابق کراچی پولیس حکام نے اپنے اہل کاروں کو ہدایت کی ہے کہ ان کے لیے شٹل سروس شروع کر دی گئی ہے، یہ سروس ساؤتھ، ایسٹ، سینٹرل اور ملیر میں جاری ہے، ویسٹ زون کے اہل کاروں کو بھی پک اینڈ ڈراپ سروس دی جار ہی ہے، اہل کاروں کو تھانوں اور دفاتر کے قریب چھوڑا جا رہا ہے۔

ادھر کراچی شہر میں ایکسپورٹ سیکٹر کی مختلف صنعتوں کو کھلنے اور جزوی کاروبار کی اجازت دی گئی ہے، فیکٹریز کے لیے سخت ایس او پیز جاری کی گئی ہیں، ملازمین کو حفاظتی اقدامات کے بعد داخلے کی اجازت دی جا رہی ہے۔

شہریوں کے لیے بھی ڈبل سواری پر پابندی برقرار ہے، تمام استثنیٰ اور رعایت ختم کی جا چکی ہے، تعلیمی ادارے، سرکاری دفاتر، مارکیٹیں اور پبلک ٹرانسپورٹ بند ہیں، پٹرول پمپس، دواؤں اور اشیائے ضروریہ کی دکانیں اوقات مقررہ میں کاروبار کر سکتی ہیں۔

صدر آل سٹی تاجر اتحاد اور صوبائی وزیر سعید غنی آمنے سامنے

پولیس اور رینجرز کی جانب سے شہر کے مختلف مقامات پر ناکہ بندی ہے، شہریوں کو پوچھ گچھ کے بعد آمد و رفت کی اجازت دی جا رہی ہے، تاہم چند علاقوں میں ناکوں پر آزادانہ آمد و رفت بھی جاری ہے۔

تاجروں کے ایک دھڑے نے یکم رمضان سے کاروبار کھولنے کا اعلان کیا ہے، تاہم حکومت سندھ نے واضح طور پر کہا ہے کہ اس کی اجازت نہیں دی جائے گی، گزشتہ روز آئرن اور ٹمبر مارکیٹس کھلنے پر پولیس نے تاجروں پر تشدد بھی کیا تھا اور چند نمایاں تاجروں کے خلاف مقدمات بھی درج کر کے انھیں گرفتار کیا گیا تھا۔

Comments

یہ بھی پڑھیں