The news is by your side.

Advertisement

بھارت: پولیس کمانڈوز نے 34 ماؤ نواز باغی مار دیے

ممبئی: بھارت کی وسطی ریاست مہاراشٹر میں پولیس کمانڈوز کی ایک کارروائی میں چونتیس ماؤ نواز باغی ہلاک ہوگئے۔

تفصیلات کے مطابق مہاراشٹر کے گھنے جنگل میں سیکورٹی فورسز نے گھات لگا کر باغیوں پر حملہ کیا تھا، باغی جنگ جوؤں میں عورتیں بھی شامل تھیں جن کی لاشیں کمانڈو کارروائی کے دو دن بعد بھی دریا سے نکالی جاتی رہیں۔

مہاراشٹر پولیس کے ڈائریکٹر جنرل ستیش ماتھر نے صحافیوں کو بتایا کہ چونتیس لاشیں نکالی جاچکی ہیں تاہم مرنے والے باغیوں کی تعداد زیادہ ہو سکتی ہے کیوں کہ دریا سے ابھی تک لاشیں نکالی جارہی ہیں۔

دریائے اندراوتی کے ذریعے فرار ہونے کی کوشش کرنے والے متعدد باغیوں کو گولیوں کا نشانہ بنایا گیا تھا، اس سے قبل ہونے والی جھڑپ میں سولہ باغی مارے گئے تھے۔

واضح رہے کہ پولیس کی یہ کارروائی مہاراشٹر اور چھتیس گڑھ کی سرحد پر کی گئی تھی جہاں گزشتہ ماہ سڑک کنارے بم میں نو پولیس اہل کار ہلاک ہوئے تھے۔

بھارت نے دس ماؤ نواز باغی قتل کردیے

خیال رہے کہ نیکسلائٹ تحریک جو 1960 میں شروع ہوئی تھی، میں مقامی بے زمین کسان اور قبائلی شامل ہیں۔ اس تحریک میں شامل جنگ جو ابتدا میں تیر اور بھالے کے ساتھ بھارتی سیکورٹی فورسز سے لڑتے تھے، پھر انھوں نے پولیس چوکیوں پر حملے کرکے کلاشنکوف اور خود کار رائفلیں حاصل کیں۔

نیکسلائٹ باغی بھارت کی مختلف ریاستوں میں گزشتہ چند عشروں سے آزادی کی جنگ لڑ رہے ہیں اور انھیں بیرون ملک سے کمیونسٹ گروپس سے مالی مدد ملتی ہے۔


خبر کے بارے میں اپنی رائے کا اظہار کمنٹس میں کریں۔ مذکورہ معلومات کو زیادہ سے زیادہ لوگوں تک پہنچانے کے لیے سوشل میڈیا پر شیئر کریں۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں