site
stats
پاکستان

جعلی پیروں کے خلاف 500 علماء کا فتویٰ

لاہور: جعلی پیروں اور عاملوں کے خلاف مختلف مسالک کے 500 علماء نے اجتماعی فتویٰ دے دیا جس میں کہا گیا ہے کہ اسلام میں غیر شرعی حرکات کی کوئی گنجائش نہیں ہے۔

تفصیلات کے مطابق 500 علماء نے مشترکہ فتویٰ جاری کیا جس میں کہا گیا ہےکہ جس درگاہ پر شریعت کی پابندی نہیں وہ خانقاہ نہیں بلکہ دکان ہے اور غیر شرعی امور میں ملوث جعلی پیر معاشرے کےلیے ناسور ہیں۔

مشترکہ فتوے میں کہا گیا ہے کہ حکومت جعلی پیروں اور عاملوں کے خلاف کریک ڈاؤن کرے کیونکہ ایسے افراد جو  اسلام کے نام پر غیر شرعی کام کررہے ہیں اُن کی کوئی گنجائش موجود نہیں۔

فتوے میں 500 علماء نے شرعی احکامات کے مطابق فیصلہ کیا ہے کہ وہ درگاہیں جہاں پر جعلی افراد پیر بنے بیٹھے ہیں وہ خانقاہ نہیں بلکہ کمانے کی دکان ہے۔

پڑھیں: ’’ بیٹے تھے اللہ کے لیے قربان کردیے، 20 افراد کے قاتل کا سفاکانہ اعتراف ‘‘

یاد رہے دو روز قبل پنجاب کے علاقے سرگودھا میں جعلی پیر نے 20 افراد کو تشدد کر کے ہلاک کردیا تھا جسے پولیس نے گرفتار کرلیا، زندہ بچ جانے والے عقیدت مندوں کا کہنا ہے کہ پیر صاحب کو جلال آگیا تھا۔

مزید پڑھیں: ’’ جعلی پیر کے بہیمانہ تشدد سے خاتون جاں بحق ‘‘

دوسری جانب وزیر اوقاف پنجاب نے مؤقف اختیار کیا کہ عبد الوحید نے تمام قتل ذاتی دشمنی کی بنیاد پر کیے، متولی خانقاہ پر قبضہ حاصل کرنا چاہتا تھا اس لیے اُس نے جانشین سمیت تمام افراد کو قتل کردیا۔

Print Friendly, PDF & Email
20

Comments

comments

اس ویب سائیٹ پر موجود تمام تحریری مواد کے جملہ حقوق@2018 اے آروائی نیوز کے نام محفوظ ہیں

To Top