site
stats
پاکستان

سانحہ نانگا پربت کے دوسال بعد پاکستان میں کوہ پیمائی لوٹ آئی

نانگا پربت بیس کیمپ پر 22 جون 2013 کوہونے والے سانحے کو دوسال سے زائد کا عرصہ گزرچکا ہے جس میں 10سیاح مارےگئے تھے جن میں نو غیر ملکی تھے۔

نانگا پربت بیس کیمپ


سال 2013 میں 4،200 فٹ کی بلندی پر پیش آنے والے نانگا پربت کے بیس کیمپ میں ایک خون آشام سانحہ پیش آیا تھا۔

سانحے میں ایک امریکن، تین یوکرینین، دو سلواک، ایک لیوتھینین، ایک چینی ، ایک نیپالی شیرپااور ایک پاکستانی گائڈ شامل تھے۔

پولیس نے بعد ازاں کی جانے والے تحقیقات کے نتیجے میں کہا کہ حملہ آور 2 پاکستانی گائڈز کو اغوا کرکے ان کی رہنمائی میں یہاں تک پہنچے تھے۔

سانحے میں زندہ بچ جانے والے پاکستانی کوہ پیما شیرخان کے مطابق دہشت گردوں نے پہلے تو رقم، سیٹلائٹ فون اور ریڈیو سیٹس ہتھیائے اوراسکےبعد ہمیں رسیوں سے باندھااورپھر پشت سے گولی ماردی گئی۔ انہوں نے یہ بھی بتایا کہ حملہ آور مسلسل چلا رہے تھے کہ ’’یہ اسامہ بن لادن کا انتقام ہے‘‘۔

واضح رہے کہ تاحال واقعے میں ملوث افراد کو عدالت میں پیش نہیں کیا گیا حالانکہ واقعے کی تفتیش کے سلسلے میں متعدد گرفتاریاں ہوئی ہیں۔

پاکستان میں 2015 میں کوہ پیمائی کا دوبارہ احیاء


قتل و غارت کے اس سانحے کے کافی وقت بیت چکا ہے اوراب کوہِ پیمائی دوبارہ سے پاکستان میں فروغ پانے جارہی ہے جیسا کہ آلٹی ٹیوڈ پاکستان نامی ایک بلاگ میں کہا گیا ہے کہ اس سال دس مہمات کے ٹو سر کرنے کے لئے جائیں گی، 11 بروڈپیک کا رخ کریں گی جبکہ 11 مہمات کے ٹو کے نزدیک گیشربروم نامی چوٹیوں کے سلسلے کا رخ کریں گی۔

ذیل میں پہاڑوں کی چوٹیوں اور انہیں فتح کرنے دنیا بھرسے آنے والی ٹیموں کی تفصیلات درج ہیں۔

کے ٹو


کے ٹو

کے ٹو دنیا کا دوسراسب سے بلند اورسب سے زیادہ خطرناک ترین پہاڑ ہے جس کی اونچائی 8،611 میٹر ہے۔ رواں سال اسے سر کرنے کے لئے 10 ٹیمیں اپنی جان ہتھیلی پر رکھ کر روانہ ہوں گی۔ میڈیسن سے روانہ ہونے والی مہم میں زیادہ ترافراد امریکی ہیں اور ساتھ میں ایک شخص نیپال سے،ایک فرانس سے اور ایک پاکستان سے شامل ہے۔

پاکستانی کوہ پیما بہن بھائی مرزا علی اور مشہورِ زمانہ ثمینہ بیگ بھی کے ٹو کو سر کرنے کے لئے مہم جوئی کریں گے۔

یورپی ممالک سوئٹرز لینڈ اور اسپین سے آںے والی ٹیموں میں تین تین ممبر شامل ہیں اور وہ بھی کے ٹو سر کریں گی۔ارجنٹینا، ایکوڈور، ہنگری، رومانیہ، آسٹریلیا، نیوزی لینڈ، اور یو کے کی ٹیمیں بھی میم جوئی کریں گی۔ فرانس ، کینیڈا ، ناروے، آئرلینڈ اور اسپین سے وابسطہ افراد پر مشتمل ٹیم بھی انٹرنیشنل سیون سمٹ کے سلسلے میں کے ٹو سر کرنے آئے گی۔

بروڈ پیک


بروڈ پیک

بروڈ پیک دنیا کا 12 وان بلند ترین پہاڑ ہے جس کی اونچائی 8،051 میٹر ہے اسے بھی سر کرنے کے لئے دنیا بھرسے مہم جو آئیں گے۔

سلواکیا، نیوزی لینڈ، رومانیہ، بلگاریہ کے مہم جوؤں پر مشتمل عالمی ٹیم بروڈ پیک کو فتح کرنے پاکستان آئے گی۔

اسپین سے بھی کوہ پیماوٗں کی ایک نمایاں تعداد بروڈ پیک کو سر کرنے کی کوشش کرے گی جبکہ کینیڈا اور جرمنی سے تعلق رکھنے والے ال ہینکوک اور بلی بیرلنگ بھی اس عظیم پہاڑ کو فتح کرنے کی کوشش کریں۔

پاکستان، اسپین، جرمنی،امریکہ، برطانیہ، آسٹریلیا اور سوئٹزرلینڈ سے تعلق رکھنے والے19 افراد پرمشتمل ٹیم بھی سمٹ کلائمبمہم کے سلسلے میں بروڈ پیک سر کرنے آئے گی۔

گیشربرومز


گیشر بروم

گیشربرومز کو ہ قراقرم میں بالتورو گلیشیئر کے نزدیک گلگت بلتستان میں واقع ہے۔

چیک ری پبلک، پولینڈ ، چائل، امریکہ، میکیسکو،نیپال،پاکستان، پیرو، اور تائیوان کئ کوہ پیماوٗں پر مشتمل 11 ٹیمیں اس پہاڑی سلسلے کو فتح کریں گی۔

Print Friendly, PDF & Email
20

Comments

comments

اس ویب سائیٹ پر موجود تمام تحریری مواد کے جملہ حقوق@2018 اے آروائی نیوز کے نام محفوظ ہیں

To Top