The news is by your side.

Advertisement

برطانیہ کے بعد جنوبی افریقا میں کورونا کی نئی قسم نے خطرے کی گھنٹی بجا دی

کورونا وبا کی اصل حالت سے ماہرین ابھی ٹھیک طرح نمٹے نہ تھے کہ اب نئی قِسموں نے بھی سر اٹھانا شروع کردیا ہے، برطانیہ کے بعد جنوبی افریقا میں کورونا کی نئی قسم نے بڑا چیلنج کھڑا کردیا۔

ماہرین کا ماننا ہے کہ جنوبی افریقا میں پائی جانے والی نئی قسم موجودہ ویکسین کے خلاف زیادہ مزاحمت کرسکتی ہے۔ اس صورت حال کے بعد موجودہ ویکسین کے کرونا کی نئی قسم پر اثرات مرتب ہوں گے یا نہیں، یہ اہم سوال کھڑا ہوگیا ہے۔ البتہ کئی سائنسدانوں کا خیال اس کے خلاف ہے۔

جنوبی افریقا میں آکسفورڈ یونیورسٹی کی تیار کردہ کووڈ ویکسین کے ٹرائلز کی قیادت کرنے والے پروفیسر شبیر مہدی کا کہنا ہے کہ ہمیں تشویش ہے کہ جنوبی افریقا میں کورونا کی نئی قسم موجودہ ویکسین کے خلاف مزاحمت کرے گی، لیکن ایسا کہنا کہ موجودہ ویکسین غیر اثر ہے تو یہ غلط ہوگا۔

برطانوی ماہرین اور حکومت نے بھی خدشہ ظاہر کیا ہے کہ مذکورہ نئی قسم کے خلاف ویکسین مؤثر ثابت نہیں ہوگی۔ حالیہ دنوں برطانوی وزیر صحت میٹ ہینکوک کا کہنا تھا کہ نئی قسم کے حوالے سے بہت زیادہ تشوش زدہ ہوں، اسی کے پیش نظر جنوبی افریقا پر سفری پابندی عائد رکھی ہے۔

کرونا وائرس کی نئی قسم کے حوالے سے تشویشناک انکشاف

انہوں نے کہا کہ اس نئی قسم کے اولین کیسز برطانیہ میں رپورٹ ہوئے ہیں، تاہم ماہرین اس حوالے تحقیق کررہے ہیں، ممکنہ طور پر جلد اس سے متعلق کوئی حتمی رپورٹ سامنے آئے گی۔

سائنس دانوں کے مطابق یہ نئی قسم برطانیہ میں دریافت ہونے والی قسم کے مقابلے میں زیادہ میوٹیشن کے عمل سے گزری ہے، جس کی وجہ سے یہ اُن اینٹی باڈیز کو بھی ہدف بناسکتی ہے جو وبا سے لڑتی ہیں۔

دریں اثنا جنوبی افریقہ کی وٹس یونیورسٹی میں ویکسین کی ماہر پروفیسر ہیلن ریز نے وضاحت کی ہے کہ نئی قسم کو مدنظر رکھتے ہوئے ویکسین میں تبدیلی ممکن ہے، یہ نئی قسم برطانیہ میں دریافت قسم سے زیادہ متعدی نہیں کیونکہ ایسے کوئی شواہد نہیں ملے اور نہ ہی اس کے جان لیوا ہونے کے ثبوت ہیں۔

Comments

یہ بھی پڑھیں