The news is by your side.

Advertisement

عابدہ اقبال کی برسی پربہارایوارڈزکاانعقاد

شاعرہ، صحافی اور افسانہ نگار، عابدہ اقبال کی آج ساتویں برسی ہے

منفرد لب و لہجہ کی معر وف شاعرہ ، افسانہ نگار، صحافی، کالم نگارر عابدہ اقبال آزاد کی ساتویں برسی آج منائی جارہی ہے۔ اس موقع پران سے منسوب بہار ایوارڈز کا بھی انعقاد کیا گیا ہے۔

عابدہ اقبال جدید دور کی شاعرہ تھیں۔ شاعری، افسانہ ہو یا کالمز ، عابدہ نے اپنی تحریر میں فن و تخلیق کا بھرپوراستعمال کیا۔آپ 20 اپریل 2012 کو کم عمری میں ہی خالقِ حقیقی سے جا ملی تھیں۔

بے وقت وفات نے اردو ادب اورفنِ شعر کو ا نتہائی قوت کے ساتھ ابھرتے ہوئے ٹیلنٹ سے محروم کر د یا ہے۔ عابدہ اقبال بنگلہ دیش کے مشہور تاجرغلام ربانی کی بیٹی اور کراچی میں ایڈورٹائزنگ کی دنیا کے معروف نام اقبال آزاد سیدکی اہلیہ تھیں۔

انہوں نے ڈھاکا سے ایم بی بی ایس کی ڈگری حاصل کی تھی لیکن مسیحائی کو بطور پیشہ نہیں اپنایا بلکہ صحافت کو ترجیح دی، عابدہ زندگی اور انسانیت کی شاعرہ تھیں۔بنگال کے موسم ان کی شاعری میں نمایاں ہیں۔ا

ن کی منفرد شاعری کی کتاب ’آسمان ‘نے بے پناہ مقبولیت حاصل کی۔عابدہ اقبال کراچی شہر کے حالات پر گہری نظر رکھتی تھیں۔ انہوں نے شہر قائد میں امن و امان کی صورت حال پر بے شمارنظمیں، کالمز اور مضامین رقم کی۔

عابدہ اقبال آزاد کی شاعری اور تحریر کا بنیادی عنصر ظلم اور نا انسافی کے خلاف انسانیت کے حق میں صدائے احتجاج ہے۔عابدہ نے عام اور معاشی لحاظ سے محروم طبقے سے وابستہ لوگوں کی زندگی کو اپنی تخلیقات کا موضوع بنا لیا۔ نہ صرف یہ بلکہ انہوں نے اپنی تحریر میں معاشی طورپرپسے ہوئے طبقے اورحقوقِ نسواں کے لیے اپنی پوری قوت سے آواز بلند کی اوران کے حق میں احتجاج کیا۔

وہ بنیادی طورپرامن اور سیاست میں توازن کے حق میں تھیں۔ عابدہ مساوات پریقین رکھتی تھیں اورمعاشرے کے ہراس فرنٹ پر مقابلہ کرنے کو تیارتھیں جہاں سے عام طبقے کے ساتھ نا انصافی، ظلم اور تشدد روا رکھا جاتا تھا۔

بطور صحافی وہ دو عنوانات سے کالم لکھا کرتی تھیں، کرنٹ افیئرزپران کی گرفت ان کے کالم ’آئینہ‘ سے ظاہرہوتی تھی اور سماجی مسائل پر کالم لکھے جانے والے کالم دوسراچہرہ کے حوالے سے وہ عوام میں بے حد پسند کی جا تی تھیں۔

عابدہ اقبال کی شاعری، کالمزاوردیگر مضامین مختلف اخبارات، میگزینز اور مڈویک میں شائع ہوتے رہے۔ ا ن کی ادبی خدمات کے وجہ سے قارئین کے دلوں میں ہمیشہ زندہ رہیں گی۔

بہارایوارڈز


ان کی یاد میں تنظیم برائے فن اورتخلیق مماسلات اسرار کے جانب سے آج ’بہارایوارڈز‘ کا اعلان بھی کیا گیا ہے۔ بہار ایوارڈز مشترکہ طورپرعابدہ اقبال آزاد اوراسرار حسین کی یاد میں اردو شاعری پر مبنی ایک تخلیقی مقابلہ ہے۔

ایوارڈز کے لیے نامزدگیاں پانچ فروری سے 9 اپریل 2019 تک لی گئیں۔ اس مقابلے میں پاکستان اوردیگر ممالک سے شعراءاور شاعرات نے بھرپور حصہ لیا۔ کراچی پریس کلب کی ادبی کمیٹی او ر ادبی تنظیم حلقہ ارباب ذوق کے جانب سے اس موقع پریادگاری نشستوں اورسمپوزیم کا انعقاد کیا جارہا ہے۔

بہارایوارڈز کو مختلف کیٹیگریوں میں تقسیم کیا گیا تھا، نظم کی کیٹیگری میں علیزہ زہرہ نے پہلی پوزیشن حاصل کی، غزل کی کیٹیگری میں فواد رضا پہلی پوزیشن حاصل کرنے میں کامیاب رہے، جبکہ نثری نظم میں سیمی کرن سرفہرست رہیں۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں