The news is by your side.

Advertisement

اسحاق ڈار کی جائیداد نیلام ہوگی ، احتساب عدالت کا فیصلہ

عدالت نے نیب کے خلاف اہلیہ تبسم اسحاق ڈار کی درخواست مسترد کردی

اسلام آباد : احتساب عدالت نے نیب کے خلاف سابق وزیر خزانہ اسحاق ڈار کی اہلیہ کی درخواست مسترد کرتے ہوئے فیصلے میں کہا اسحاق ڈار کی جائیداد نیلام ہوگی۔

تفصیلات کے مطابق احتساب عدالت نے آمدن سے زائد اثاثوں کے مقدمے میں مفروراسحاق ڈار کی جائیداد صوبائی حکومت کی تحویل میں دینے کے معاملے پر ملزم اسحاق ڈار کی اہلیہ کی درخواست پر فیصلہ سنا دیا۔

احتساب عدالت کے جج محمد بشیر نے محفوظ شدہ فیصلہ سناتے ہوئے تبسم اسحاق ڈار کی جائیداد نیلامی روکنے کی درخواست مسترد کردی اور نیب کو اسحاق ڈار کی جائیداد نیلام کرنے کی اجازت دے دی ، عدالت نے قرار دیا کہ تبسم اسحاق ڈار جائیداد تحفے میں ملنے کا کوئی ثبوت پیش نہیں کرسکیں۔

یاد رہے تبسم اسحاق ڈار نے جائیداد قرقی کو چیلنج کیا تھا، درخواست میں موقف اختیار کیا گیا تھا کہ ملزم اسحاق ڈارہیں، لاہوروالا گھر تو میری ملکیت ہے، میری ملکیت والا گھر ضبط نہیں کیاجاسکتا، گھر چودہ فروری انیس سو نواسی کو اسحاق ڈار نے حق مہر کے عوض گفٹ کیا، لاہور والے گھر کی میں اکیلی مالک ہوں، گلبرگ لاہور والا گھر حکومتی تحویل میں جانے سے میرا نقصان ہوگا۔

مزید پڑھیں : انٹرپول نے اسحاق ڈار کے ریڈ وارنٹ جاری کرنے کی درخواست مسترد کردی

یاد رہے گزشتہ سال اکتوبر میں احتساب عدالت نے سابق وزیر خزانہ اسحاق ڈار کی گاڑیاں اور جائیداد نیلام کرنے کا حکم دیا تھا، عدالت نے اپنے فیصلے میں کہا تھا کہ اسحاق ڈارکی قرق جائیداد نیلام کرنے کا اختیار صوبائی حکومت کو ہے، صوبائی حکومت کو اختیار ہے جائیدادیں نیلام کرے یا اپنے پاس رکھے۔

واضح رہے کہ سابق وزیر خزانہ پاکستان اسحاق ڈار کے خلاف نیب کورٹ میں آمدن سے زائد اثاثوں کا ریفرنس زیر سماعت ہے، اسحاق ڈار 3 مارچ کو سینیٹ انتخابات سے قبل طبیعت کی خرابی کے باعث لندن چلے گئے تھے، جس کے بعد تاحال اسحاق ڈار لندن میں ہی مقیم ہے۔

قومی احتساب بیورو (نیب) نے اثاثہ جات ریفرنس میں اشتہاری اور مفرور ملزم و سابق وفاقی وزیر خزانہ اسحاق ڈار کو بلیک لسٹ کرتے ہوئے ان کا پاسپورٹ بھی بلاک کردیا تھا۔

fb-share-icon0
Tweet 20

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں