The news is by your side.

Advertisement

کیا امریکی فوج ڈیڈ لائن سے قبل افغانستان سے نکل جائے گی؟

واشنگٹن: امریکی حکام نے کہا ہے کہ امریکی فوج، صدر جو بائیڈن کی طرف سے افغانستان سے 11 ستمبر کو دی گئی ڈیڈ لائن سے قبل، آئندہ چند دنوں میں انخلا کرنے والی ہے۔

برطانوی خبر رساں ادارے روئٹرز کے مطابق منگل کو امریکی حکام نے نام ظاہر نہ کرنے کی شرط پر بتایا کہ امریکی فوج ڈیڈ لائن سے پہلے ہی چند دنوں میں افغانستان سے انخلا کرنے والی ہے۔

امریکی فوج نے جون کے آغاز میں افغانستان سے پچاس فی صد فوجیوں کے انخلا کے بعد انخلا کی رفتار کے حوالے سے تفصیلات دینا بند کر دی ہیں، دوسری طرف امریکی فوج کے انخلا میں تیزی ایسے وقت میں ہو رہی ہے جب ملک میں طالبان کے حملے بڑھ رہے ہیں۔

حکام کا کہنا ہے کہ اس انخلا میں افغانستان میں امریکی سفارت کاروں کی حفاظت اور ممکنہ طور پر کابل ایئر پورٹ کی حفاظت میں معاونت کرنے والے فوجی اہل کار شامل نہیں ہیں، افغانستان میں 650 کے قریب فوجی سفارت خانے پر تعینات ہوں گے۔

منگل کو پینٹاگون نے کہا تھا کہ امریکی فوج کے انخلا کا یہ مطلب نہیں ہے کہ نیٹو کا ’ریزولیوٹ سپورٹ مشن‘ بھی ختم ہو جائے گا، لیکن نیٹو فورسز کے انخلا سے افغانستان میں خانہ جنگی شروع ہونے سے متعلق تشویش بھی پائی جا رہی ہے۔

یہ بھی کہا جا رہا ہے کہ القاعدہ کو دوبارہ امریکا اور دیگر اہداف پر نئے حملوں کی منصوبہ بندی کرنے کا موقع مل سکتا ہے، اقوام متحدہ کی ایک رپورٹ میں کہا گیا تھا کہ افغانستان میں القاعدہ کے 500 جنگ جو ہیں اور طالبان کے ان کے ساتھ گہرے روابط ہیں، جن کہ پینٹاگون کے مطابق طالبان نے افغانستان کے 419 میں سے 81 اضلاع پر کنٹرول حاصل کر لیا ہے۔

Comments

یہ بھی پڑھیں